تمہاری انجمن سے اُٹھ کے دیوانے کہاں جاتے| قتیل شفائی |

تمہاری انجمن سے اُٹھ کے دیوانے کہاں جاتے| قتیل شفائی |
تمہاری انجمن سے اُٹھ کے دیوانے کہاں جاتے| قتیل شفائی |

  

تمہاری انجمن سے اُٹھ کے دیوانے کہاں جاتے

جو وابستہ ہوئے تم سے وہ افسانے کہاں جاتے

نکل کر دیر و کعبہ سے اگر ملتا نہ مے خانہ

تو ٹھکرائے ہوئے انساں خدا جانے کہاں جاتے

تمہاری بے رخی نے لاج رکھ لی بادہ خانے کی

تم آنکھوں سے پلا دیتے تو پیمانے کہاں جاتے

چلو اچھا ہوا کام آ گئی دیوانگی اپنی

وگرنہ ہم زمانے بھر کو سمجھانے کہاں جاتے

قتیلؔ اپنا مقدر غم سے بیگانہ اگر ہوتا

تو پھر اپنے پرائے ہم سے پہچانے کہاں جاتے

شاعر:قتیل شفائی

(مجموعۂ کلام:گجر؛سالِ اشاعت،1949 )

Tumhaari    Anjuman   Say   Uth   Kar   Dewaanay   Kahan   Jaatay

Jo   Waabasta   Huay  Tum   Say   Wo   Afsaanay   Kahan   Jaatay

Nikal   Kar   Dair-o-Kaaba   Say   Agar   Milta   Na    May   Khaana

To   Thukraaey   Hua   Insaan    Khuda   Jaanay   Kahan   Jaatay

Tumhaari   Be    Rukhi   Nay   Laaj   Rakh    Li   Baada   Khaany   Ki

Tum   Aankhon   Say   Pilaa   Detay   To   Paimaanay   Kahan   Jaatay

Chalo   Achha   Hua   Kaam   Aa   Gai   Dewaangi   Apni

Wagarna   Ham   Zamaanay    Bhar   Ko   Samjhaanay    Kahan   Jaatay

QATEEl   Apna   Muqaddar   Gham   Say   Beegaana   Agar   Hota

To    Phir   Apnay    Paraaey   Ham    Say   Pehchaanay   Kahan   Jaatay

Poet: Qateel    Shifai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -