گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں| قتیل شفائی |

گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں| قتیل شفائی |
گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں| قتیل شفائی |

  

گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں

ہم چراغوں کی طرح شام سے جل جاتے ہیں

شمع جس آگ میں جلتی ہے نمائش کے لیے

ہم اُسی آگ میں گمنام سے جل جاتے ہیں

خود نمائی تو نہیں شیوۂ اربابِ وفا

جن کو جلنا ہو وہ آرام سے جل جاتے ہیں

بچ نکلتے ہیں اگر آتشِ سیّال سے ہم

شعلۂ عارضِ گلفام سے جل جاتے ہیں

جب بھی آتا ہے مرا نام ترے نام کے ساتھ

جانے کیوں لوگ مرے نام سے جل جاتے ہیں 

شاعر: قتیل شفائی

(مجموعۂ کلام:گجر؛سالِ اشاعت،1949 )

Garmi-e-Hasrat-e-Nakaam    Say  Jal    Jaatay   Hen

Ham    Charaaghon    Ki    Tarah   Shaam    Say  Jal    Jaatay   Hen

 Shama   Jiss   Aag   Men   Jalti   Hay   Numaaish   K   Liay

Ham   Usi   Aag   Men   Gumnaam    Say  Jal    Jaatay   Hen

 Khud   Numaai   To   Nahen    Shewaa-e-Arbaab-e-Wafa

Jin    Ko   Jalna    Ho   Wo   Aaraam    Say  Jal    Jaatay   Hen

 Bach   Nikaltay   Hen   Agar   Aatish-e-Sayyaal    Say  Ham

Shola-e-Aariz-e-Gulfaam    Say   Jal    Jaatay   Hen

 Jab   Bhi    Aata   Hay   Mira   Naam   Tiray   Naam   K   Saath 

Jaanay    Kiun    Log   Miray    Naam    Say  Jal    Jaatay   Hen

 

Poet: Qateel   Shifai

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -