وہ نہ آئیں گے کبھی دیکھ کے کالے بادل| قمر جلالوی |

وہ نہ آئیں گے کبھی دیکھ کے کالے بادل| قمر جلالوی |
وہ نہ آئیں گے کبھی دیکھ کے کالے بادل| قمر جلالوی |

  

وہ نہ آئیں گے کبھی دیکھ کے کالے بادل

دو گھڑی کے لیے اللہ ہٹا لے بادل

آج یوں جھوم کے کچھ آ گئے کالے بادل

سارے میخانوں کے کھلوا گئے تالے بادل

آسماں صاف شبِ وصل سحر تک نہ ہوا

اس نے ہر چند دعا مانگ کے ٹالے بادل

بال کھولے ہوئے یوں سیر سرِ بام نہ کر

تیری زلفوں کی سیاہی نہ اڑا لے بادل

وقتِ رخصت عجب انداز سے ان کا کہنا

پھر دعا کل کی طرح مانگ بلا لے بادل

میں تو برسات میں بھی چاندنی صدقے کر دوں

اے قمرؔ   کیا کروں جب مجھ کو چھپا لے بادل

شاعر: قمر جلالوی

(مجموعۂ کلام:رشکِ قمر؛سالِ اشاعت،1977 )

Wo   Na   Aaen   Gay    Kabhi   Dekh   Kar   Kaalay    Baadal

Do   Gharri   K    Liay   ALLAH    Hataa   Lay    Baadal

Aaj    Yun    Jhoom    Kar   Aa   Gaey   Kaalay    Baadal

Saaray    Maikhaanon    K    Khulawa     Gaey   Taalay    Baadal

Asmaan   Saaf    Shab-e-Wasl    Sahar   Tak   Na   Hua

Uss    Nay    Harchand    Dua   Maang   K   Taalay    Baadal

Baal    Kholay    Huay    Yun    Sair    Sar-e-Baam    Na   Kar

Teray    Zulfon    Ki    SDiyaahi   Na   Urraa   Lay    Baadal

Waqt-e-Rukhsat    Ajab    Andaaz    Say    Uss    Ka   Kehna

Phir    Dua    Kall    Ki   Tarah    Maang    Bulaa   Lay    Baadal

Main    To    Barsaat    Men    Bhi   Chaandni     Sadqay    Kar   Dun

Ay    QAMAR    Kaya    Krun    Jab    Mujh    Ko    Chhupaa    Lay    Baadal

Poet: Qamar   Jalalvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -