آہ سن کے جلے ہوئے دل کی| قمر جلالوی |

آہ سن کے جلے ہوئے دل کی| قمر جلالوی |
آہ سن کے جلے ہوئے دل کی| قمر جلالوی |

  

آہ سن کے جلے ہوئے دل کی

کانپ اٹھی لَو فراخِی دل کی

بے کھلا پھول توڑنے والے

یہ تو تصویر ہے مرے دل کی

یا تو بھولا ہے نا خدا رستہ

یا حدیں ہٹ گئیں ہیں ساحل کی

وہ جو اب آئنے میں دیکھتے ہیں

خیر ہو چوٹ ہے مقابل کی

میری کشتی کا رخ بدلنے دو

موج لے لے گی پناہ ساحل کی

راہبر خود بھٹک گئے رستہ

ہو قمر خیر اب تو منزل کی

شاعر: قمر جلالوی

(مجموعۂ کلام:رشکِ قمر؛سالِ اشاعت،1977 )

Aaah   Sun   Kar   Jalay   Huay   Dil   Ki

Kaanp   Uuthi   Lao   Charaagh-e-Mehfill   Ki

Be    Khila   Phool   Torrnay   Waalay

Yeh   To   Tasveer    Hay   Miray   Dil   Ki

Ya   To   Bhoola    Hay   Naa   Khuda   Rasta

Ya   Haden   Hatt   Gaen   Hen   Saahil   Ki

Wo   Jo   Ab   Aainay   Men   Dekhtay   Hen

Khiar   Ho   Chot   Hay   Muqaabil   Ki

Meri    Kashti    Ka   Rukh   Badalnay   Do

Moj   Lay    Gi   Panaah   Saahil   Ki

Raahbar    Khud    Bhattak   Gaey   Rasta

Ho   QAMAR   Khair    Ab   To   Manzill   Ki

Poet: Qamar   Jalalvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -