کارِ عشق آزما کرے کوئی| لیاقت علی عاصم |

کارِ عشق آزما کرے کوئی| لیاقت علی عاصم |
کارِ عشق آزما کرے کوئی| لیاقت علی عاصم |

  

کارِ عشق آزما کرے کوئی

ضبط کو ضابطہ کرے کوئی

چاند پر جائے یا ستارے پر

آدمی کا بھلا کرے کوئی

کچھ تو کم ہو یہ شورشِ دریا

ڈوب جائے خدا کرے کوئی

دوستی ہو کہ دشمنی ہم سے

گاہے گاہے ملا کرے کوئی

عاصم آخر زمیں ہے غالب کی

کس طرح حق ادا کرے کوئی

شاعر: لیاقت علی عاصم

(مجموعۂ کلام:آنگن میں سمندر؛سالِ اشاعت،1988 )

Kaar-e-Eshq   Aazmaa   Karay   Koi

Zabt   Ko   Zaabtaa   Karay   Koi

Chaand   Par   Jaaey   Ya   Sitaaray   Par

Aadmi   Ka   Bhalaa   Karay   Koi

Kuchh   To    Kam   Ho   Yeh   Shorish-e-Darya

Doob    Jaaey    Khuda   Karay   Koi

Dosti   Ho   Keh   Dushmani   Ham   Say

Gaahay    Gaahay   Mila   Karay   Koi

ASIM    Akakhir   Zameen   Hay   GHALIB   Ki

Kiss    Tarah    Haq   Adaa   Karay   Koi

Poet: Liaqat   Ali   Asim

'

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -