بچھڑ کر رہ گئے ہیں لوگ کیا کیا| لیاقت علی عاصم |

بچھڑ کر رہ گئے ہیں لوگ کیا کیا| لیاقت علی عاصم |
بچھڑ کر رہ گئے ہیں لوگ کیا کیا| لیاقت علی عاصم |

  

بچھڑ کر رہ گئے ہیں لوگ کیا کیا

اب اِتنی دُور آ کر سوچنا کیا

گلی سے بھیڑ چَھٹتی جا رہی ہے

جو ہونا تھا تماشا، ہو چُکا کیا

محبت اور یک طَرفہ محبت

سمندر میں اکیلے ڈوُبنا کیا

محبت ہی محبت کا صِلہ ہے

تو پھر اِس سے زیادہ مانگنا کیا

بہت بے نور لگتے ہیں تِرے بعد

نظر کیا، بَرق کیا، دل کیا، دِیا کیا

کوئی تو ہو سرِ ساحل بھی عاصمؔ

اُبھرنا کیا تمہارا ڈوبنا کیا

شاعر: لیاقت علی عاصم

(مجموعۂ کلام:آنگن میں سمندر؛سالِ اشاعت،1988 )

Bichharr    Kar   Reh    Gaey    Hen    Log    Kaya    Kaya

Ab    Itni    Door   Aa    Kar   Sochna   Kaya

Gali    Say    Bheerr    Chhatti    Ja   Rahi   Hay

Jo   Hona   Tha   Tamaasha   Ho   Chuka   Kaya

Muhabbat    Aor   Yak    Tarfa   Muhabbat

Samannadar    Men    Akailay   Doobna   Kaya

Muhabbat   Hi     Muhabbat   Ka    Silaa   Hay

To   Phir    Iss   Say    Ziyaada    Maangna   Kaya

Bahut    Be Noor     Lagtay    Hen    Tiray   Baad

Nazar   Kaya   ,   Barq   Kaya  ,   Dil    Kaya    ,   Diya     Kaya

Koi   To    Ho    Sar-e-Saahil    Bhi   ASIM

Ubharna    Kaya   Tumhaara    Doobna   Kaya

Poet: Liaqat   Ali   Asim

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -