کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے خود کشی کرنے والی 19 سالہ لڑکی کی انتہائی اندوہناک کہانی

کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے خود کشی کرنے والی 19 سالہ لڑکی کی انتہائی اندوہناک ...
کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے خود کشی کرنے والی 19 سالہ لڑکی کی انتہائی اندوہناک کہانی

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کی وباء نے جب دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیا تو خوف کی ایک ایسی فضاء بنی کہ اس کے زیراثر لوگوں کے خودکشیاں کرنے کی خبریں بھی سامنے آئیں۔ انہی لوگوں میں 19سالہ برطانوی لڑکی ایملی اووین بھی شامل تھی جس نے لاک ڈاؤن شروع ہونے پر اپنی زندگی کا خاتمہ کر لیا تھا۔ دی سن کے مطابق ایملی نے خودکشی سے قبل اپنی فیملی کے نام ایک خط لکھا جس میں اس نے گھر والوں سے درخواست کی کہ ”میرے خودکشی کرنے پر آپ لوگ شرمندہ مت ہونا۔“

ایملی کے والد ٹم اووین نے ذہنی صحت کے عالمی دن کے موقع پر اپنی بیٹی کی خودکشی کی اندوہناک کہانی دنیا کو سنائی ہے۔ ٹم بتاتا ہے کہ اس کی بیٹی نے درحقیقت ذہنی صحت کے مسائل کی وجہ سے ہی یہ المناک قدم اٹھایا۔ 

برطانوی علاقے نورفوک کے رہائشی ٹم اووین نے بتایاہے کہ جب لاک ڈاؤن شروع ہوا تو ایمی کو اپنی آزادی سلب ہو جانے کا احساس لاحق ہوا۔ وہ اس خوف میں مبتلا ہو گئی تھی کہ اب وہ کبھی باہر نہیں جا سکے گی اور کام نہیں کر سکے گی۔ وہ پوری دنیا کے بند ہو جانے کے صدمے میں مبتلا تھی۔وہ اپنی تمام تر منصوبہ بندیاں منسوخ ہو جانے پر شدید ذہنی دباؤ کا شکار ہو گئی تھی۔ جس پر اس نے اپنے کمرے میں پھندہ لے کر اپنی زندگی ختم کر لی۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -کورونا وائرس -