سرکاری افسران قبلہ درست کرلیں ، غفلت برداشت نہیں کی جائے گی ، عثمان بزدار

سرکاری افسران قبلہ درست کرلیں ، غفلت برداشت نہیں کی جائے گی ، عثمان بزدار

لاہور (جنرل رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سرکاری افسران کو خبردار کیاہے کہ وہ اپنا قبلہ درست کر لیں ، قدریں بدل چکی ہیں ، سرکاری افسران اور ملازمین بھی اپنی روش بدلیں ۔سرکاری ملازمین خود کو عوام کا خادم سمجھ کر خدمات انجام دیں ۔ دفاتر میں ملاقات کیلئے’’پرچی سسٹم‘‘ کا فوری طور پرخاتمہ کیا جائے- افسران دفاتر کے باہر ملاقات کے اوقات نمایاں طور پر آویزاں کریں۔دفاتر میں اپنی حاضری ہر حال میںیقینی بنائیں مقررہ اوقات کار کی پابندی کریں اور شہریوں کیلئے دفاتر کے دروازے کھلے رکھیں۔وزیراعلیٰ نے سرکاری افسران اور ملازمین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ عوامی مسائل کے حل میں کسی صورت غیر ضروری تاخیر، غفلت یا کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی- یہ ہدایات وزیراعلی پنجاب سردار عثمان بزدار نے پیر کی صبح بغیر پیشگی اطلاع، بغیرسکیورٹی اور بغیر پروٹوکول ضلع کچہری راولپنڈی میں انتظامیہ اور پولیس افسران کے دفاتر کے اچانک دورے کے موقع پر جاری کیں۔ وزیراعلیٰ پنجاب کے اچانک دورہ کے موقع پر ڈ پٹی کمشنر راولپنڈی ڈاکٹر عمر جہانگیر ، اے ڈی سی آرمیاں بہزاد عادل، اے سی سٹی نعیم افضل، اے سی صدر عمر افتخار شیرازی، رجسٹری رجسٹرار اور سپرنٹنڈنٹ سمیت متعدد انتظامی افسران و عملے کو اپنے دفاتر میں موجود نہ پا کر وزیراعلیٰ پنجاب سخت برہم ہوئے اور کہا کہ سرکاری افسران اور ملازمین کی طرف سے فرائض منصبی کی ادائیگی میں کسی قسم کی غفلت برداشت نہیں کی جائے گی۔ اس موقع پرضلع کچہری کمپلیکس میں ڈیوٹی پر موجود واحد خاتون آفیسر اے ڈی سی جی راولپنڈی ملیحہ جمال نے وزیراعلیٰ کو بریفنگ دی- وزیر اعلیٰ پنجاب کے استفسار پر انہیں بتایا گیا کہ افسران انسداد ڈینگی مہم کی مانیٹرنگ کیلئے اپنے دفاتر سے باہر ہیں۔وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو اپنے درمیان پا کرشہریوں نے خوشگوار حیرت کا اظہار کیا اور انہیں اپنے مسائل سے آگاہ کیا۔ اس موقع پر شہریوں نے وزیر اعلی کے ساتھ سیلفیاں بنائیں اور کہاکہ وزیراعظم پاکستان عمران خان کی قیادت میں نئی حکومت کے برسراقتدار آنے کے بعد صحیح معنوں میں تبدیلی دکھائی دے رہی ہے جس کا ثبوت یہ ہے کہ پنجاب کے وزیر اعلی کسی پروٹوکول کے بغیر سرکاری دفاتر کے دورے کر رہے ہیں۔ ایک اوور سیز پاکستانی راجہ امجد اقبال نے وزیراعلی پنجاب کو گلہ کیا کہ وہ اپنے ملک میں سرمایہ کاری کرنا چاہتے ہیں لیکن وہ گزشتہ ایک سال سے مختلف محکموں اور دفاتر کے دھکے کھا رہے ہیں اور اکثر افسران اپنی سیٹوں پر موجود نہیں ہوتے جس کی وجہ سے وہ دلبرداشتہ ہیں۔ اس پر وزیر اعلی نے ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کو مذکورہ شہری کا مسئلہ فوری حل کرنے کی ہدایت کی- راجہ امجد اقبال نے اس موقع پر خوش ہو کر اپنی طرف سے وزیر اعظم پاکستان کے ڈیمز فنڈ میں پانچ ہزار ڈالرز جمع کرانے کا اعلان کیا۔ وزیراعلیٰ نے بلوچستان سے تعلق رکھنے والی خاتون کے مسئلے کے حل کیلئے ایک گھنٹے میں رپورٹ طلب کر لی۔ شہریوں نے اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعلی پنجاب کا سرکاری دفاتر کا دورہ حکومت کی عوام سے کی گئی کمٹمنٹ کا منہ بولتا ثبوت ہے . انہو ں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت کے برسر اقتدار آنے سے واقعتا خوشگوار تبدیلی آ گئی ہے- انہو ں نے وزیراعلیٰ کو اپیل کی کی وہ افسران کو اپنے دفاتر میں حاضر رہنے کا پابند بنائیں تاکہ ان کے مسائل بروقت حل ہو سکیں۔ وزیراعلیٰ پنجاب نے انہیں یقین دلایا کہ حکومت شہریوں کے مسائل کے بلاتخصیص اور بلاتاخیر جلد از جلد حل کیلئے بھرپور وسائل اور توانائی بروئے کار لا رہی ہے اور شہری بہت جلد تبدیلی دیکھیں گے-وزیراعلیٰ پنجاب نے کمشنر �آفس اور سی پی او آفس کا دورہ بھی کیا۔ سی پی او بھی اپنے دفتر میں موجود نہیں تھے - وزیراعلیٰ نے کمشنر آفس میں محرم الحرام میں امن امان کے قیام کیلئے امن کمیٹی کے اجلاس میں آئے ہوئے ڈویژن کے انتظامیہ و پولیس افسران اور مختلف مکاتب فکر کے علماء سے بھی ملاقات کی- وزیراعلیٰ نے انتظامیہ وپولیس افسران کو ہدایت کی کہ سکیورٹی کے تقاضے اپنی جگہ لیکن افسران عوام کی رسائی کیلئے اپنے دروازوں سے غیر ضروری بیریئرز ہٹا دیں۔ انہوں نے کہا کہ افسران منتخب عوامی نمائندوں سے ملاقات کر کے قانون و ضوابط کے مطابق عوامی مسائل کے فوری حل کیلئے ضروری اقدامات کریں تاکہ عام شہری حکومت کی طرف سے جاری فلاحی اقدامات سے مستفید ہو سکیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ دفاتر میں اوپن ڈور پالیسی اپنانے کی ہدایات جاری کر دی گئی ہیں اور سائلین کے افسروں سے ملنے کیلئے پرچی سسٹم ختم کر دیا گیا ہے۔ یہ عوام کی حکومت ہے اور عوامی انداز میں کام کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ افسران دفاتر میں لوگوں کے مسائل کے حل کیلئے اوپن ڈور پالیسی اپنائیں۔میں عوام کے مسائل خود جانتا ہوں۔ جو افسر اور عملہ مقررہ وقت پر دفتر نہیں آئے گا، اسے تادیبی کارروائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ وزیراعلیٰ نے کمشنرآفس ،ڈپٹی کمشنر آفس اور سی پی او آفس کے اچانک دورے کے دوران افسروں اور عملے کی حاضری کو چیک کیا ۔ وزیراعلیٰ نے افسروں اور عملے کی غیر حاضری پر برہمی کا اظہارکیااورہدایت کی کہ غیر حاضر افسروں اور عملے کی جواب طلبی کی جائے۔ وزیراعلیٰ نے دفاتر میں موجود لوگوں کے مسائل سنے اور ان کے حل کیلئے موقع پر ہی احکامات جاری کئے۔

عثمان بزدار

لاہور)جنرل رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے راولپنڈی سے واپسی کے فوراً بعد ڈیفنس میں ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کے سروس سینٹر کا بغیر پروٹوکول اچانک دورہ کیا۔وزیراعلیٰ کی سروس سینٹر میں اچانک آمد پر وہاں موجود شہری حیران رہ گئے۔ وزیراعلیٰ صرف دو گاڑیوں میں سروس سینٹر پہنچے اور انہوں نے سینٹر کے مختلف حصوں کا دورہ کیا۔سروس سینٹر میں موجود شہریوں نے گاڑیوں کی ٹرانسفر کے حوالے سے مسائل سے آگاہ کیاجس پر وزیراعلیٰ نے ان مسائل کے حل کے لئے موقع پر ہی احکامات جاری کئے۔ایک سابق افسرنے ٹرانسفرفارم کے حوالے سے شکایت کی، وزیراعلیٰ نے شکایت کے ازالے کے لئے ہدایت کرتے ہوئے کہاکہ شہریوں کی سہولت کے لئے ٹرانسفر فارم کی دستیابی ہر دفتر میں یقینی بنائی جائے۔انہوں نے کہاکہ میں خود اس نظام کو بہتر بنانے کے حوالے سے اقدامات کروں گااور گاڑیوں کی ٹرانسفر کے نظام میں مزید بہتری لائیں گے۔انہوں نے سروس سینٹر میں موجود محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کے عملے کو ہدایت کی کہ آپ کا ایس او پی(SOP ) یہ ہونا چاہیئے کہ شہریوں کو سہولت ملے نہ کہ انہیں تنگ کیا جائے۔اب ایسا سلسلہ نہیں چلے گابلکہ میں خود دورے کر کے شہریوں کی مشکلات کا جائزہ لے رہاہوں او رپبلک ڈیلنگ کرنے والے محکموں کو نتائج دینا ہوں گے۔انہوں نے کہاکہ میرا دل عوام کے ساتھ دھڑکتا ہے اورعوام کے مسئلے میرے اپنے مسئلے ہیں۔ شہریوں کو سہولت دینا متعلقہ محکمے کی ذمہ داری ہے۔آپ کا کوئی بھی مسئلہ ہو، اسے میں حل کروں گااور میں سرکاری دفاتر میں شہریوں کو سہولتیں ملنے تک چین سے نہیں بیٹھوں گا۔انہوں نے کہاکہ گاڑیوں کا ریکارڈ ایک چھت تلے ہونا چاہیے تاکہ شہریو ں کو با ر بار دفتر کے چکر نہ لگانے پڑیں ۔گاڑیوں کے کاغذات کے حوالے سے شہریو ں کو جن مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے اس کا فوری ازالہ ضروری ہے۔گاڑیوں کی نمبر پلیٹس کا بھی بروقت اجراء ہونا چاہیے ۔وزیراعلیٰ کو بعض شہریوں نے بتایاکہ یہ سینٹر اچھا کام کر رہا ہے او رانہیں اپنے کام کے حوالے سے کوئی شکایت نہیں۔وزیراعلی نے سروس سینٹر کے عملے کے مسائل بھی دریافت کئے ،وزیراعلی کو گاڑی کی عدم دستیابی کے بارے میں بتایا گیا ،جس پر وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ سروس سینٹرکو فی الفور گاڑی فراہم کی جائے اور ایئرکنڈیشن لگانے کا مسئلہ بھی حل کیا جائے۔ شہریوں نے وزیراعلیٰ کی اچانک آمد پرخوشی کا اظہار کیا اور وزیراعلیٰ سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ آپ حقیقی خادم ہیں جو بغیر پروٹوکول او راچانک اس دفتر آئے ہیں جبکہ پہلے والے بادشاہ تھے۔ شہریوں نے مسائل کے حل کیلئے فوری احکامات پر وزیراعلیٰ کو دعائیں دیں او ران کی کامیابی کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کیا ۔صوبائی مشیر اکرم چودھری بھی اس موقع پر موجود تھے۔ وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے مستقبل میں صوبے میں سموگ کے خدشے کے پیش نظر متعلقہ محکموں اور اداروں کو ضروری اقدامات کی ہدایات جاری کر دی ہیں۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے کہا ہے کہ محکمہ ماحولیات اور دیگر ادارے سموگ کے خدشے سے نمٹنے کیلئے اپنی تیاریاں مکمل رکھیں اور اس ضمن میں ہر ممکن اقدام اٹھایا جائے جس سے سموگ کے خدشے کو کم سے کم کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ زراعت فصلوں کی باقیات کو جلانے پر پابندی پر سختی سے عملدرآمد کرائے۔ اسی طرح ٹائر جلانے پر پابندی پر سختی سے عملدرآمد یقینی بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ صحت کو بھی سموگ سے پیدا ہونے والی بیماریوں سے نمٹنے کیلئے موثر طور پر اقدامات کرنے ہیں اور عوام میں آگاہی مہم چلانے کے ساتھ پیشگی احتیاطی تدابیر کے حوالے سے شعور کو اجاگر کرنا ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ محکمہ ماحولیات عوام کو سموگ کے مضر اثرات سے بچاؤ اور احتیاطی تدابیر کے حوالے سے پیشگی ضروری اقدامات کرتے ہوئے ماحولیاتی آلودگی پھیلانے والی صنعتوں کے خلاف قواعد و ضوابط کے تحت کارروائی کی جائے۔انہوں نے کہا کہ اینٹوں کے بھٹوں سے نکلنے والا دھواں ماحول کو آلودہ کرتا ہے۔ اینٹو ں کے بھٹوں کے حوالے سے موثر اقدامات کئے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ سموگ کے خدشے کے پیش نظر متعلقہ محکموں کو فعال اور متحرک انداز میں کام کرنا ہوگا۔

وزیراعلیٰ پنجاب

مزید : صفحہ اول