کراچی ، اسٹیٹ ایجنٹوں نے مختلف علاقوں کو ’’ریڈ لائٹ ایریا‘‘ میں تبدیل کر دیا

کراچی ، اسٹیٹ ایجنٹوں نے مختلف علاقوں کو ’’ریڈ لائٹ ایریا‘‘ میں تبدیل کر ...

کراچی (رپورٹ /ندیم آرائیں)شہر قائد کے مختلف علاقوں میں مخصوص اسٹیٹ ایجنٹوں نے پولیس کی ساز باز سے مکانات اور فلیٹوں کو فحاشی کے اڈوں میں تبدیل کرنا شروع کردیا ،دو سے تین ماہ کے لیے مکانات اور فلیٹس کرائے پر دلانے کے بعد بھاری کمیشن کے لالچ میں ان مقامات کو دوبارہ قبیح جرم میں ملوث افراد کے حوالے کردیا جاتا ہے ۔کلفٹن ،ڈیفنس ،گلستان جوہر ،فیڈرل بی ایریا ،پی ای سی ایچ ایس ،گلشن اقبال ،محمود آباد،لیاقت آباد،اورنگی ٹاؤن،کورنگی اور شہر کے دیگر علاقوں میں اس مذموم کاروبار کی وجہ سے شرفاء کا گھروں سے نکلنا محال ہوتا جارہا ہے ۔تفصیلات کے مطابق کراچی کے پوش علاقوں میں گیسٹ ہاؤسز کے نام پر فحاشی کے اڈوں کا کاروبار ایک طویل عرصے سے جاری ہے تاہم اب اس میں مزید جدت آگئی ہے ۔ذرائع کے مطابق چند مخصوص اسٹیٹ ایجنٹوں نے پورے شہر کو ’’ریڈ لائٹ ایریا‘‘ میں تبدیل کرنا شروع کردیا ہے ۔بھاری کمیشن کے لالچ میں یہ اسٹیٹ ایجنٹ فحاشی میں ملوث عناصر کو مکانات اور فلیٹس کرایے پر دلاتے ہیں اور اس میں ان کو مقامی پولیس کی بھرپور سرپرستی حاصل ہوتی ہے جو ایک مخصوص رقم کے عوض اس معاملے پر خاموشی اختیار کرلیتے ہیں ۔نیشنل ایکشن پلان کے تحت کسی بھی کرایے دار اور مالک مکان کو اپنے معاہدے کے حوالے سے تھانے کو آگاہ کرنا ضروری ہے تاہم اس سے پہلوتہی برتی جاتی ہے زرائع نے بتایا کہ اس وقت شہر میں ببلی آنٹی،ملکانی آنٹی،اختری آنٹی،ماریہ آنٹی،بینا آنٹی،شازیہ آنٹی،آئی آنٹی،عالیہ آنٹی،صائمہ آنٹی،لائبہ آنٹی، جمشید،حسن چاچا،اور دیگر لوگ اس فلیٹس اور بنگلے کو کرایا پر لے کر فحاشی کے اڈے بنا رہے ہیں۔ ابھی چند دن قبل ہی ڈیفنس پولیس نے راحت ملک کارنر کے پاس واقع ایک بلڈنگ 15Cکے ایک فلیٹ میں چھاپہ مارا جہاں علی حسن نامی شخص فلیٹ کرایے پر لیکر فحاشی کا اڈا چلارہ تھا ،چھاپے کے دوران4مرداور5خواتین گرفتار ہوئے ،جبکہ علی حسن نامی شخص فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا ،م[گرفتار ملزمان کے خلاف پولیس نے مقدمہ نمبر 294/34درج کرکے جیل بھیج دیا،زرائع کا کہنا ہے کہ تمام ملزمان ضمانت پر رہا ہوگئے اور اب علی حسن پھر کسی ایجنٹ کے زریعے فلیٹ کی تلاش میں ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ شہر کے بیچوں بیچ گنجان آباد علاقوں میں غیر مناسب سرگرمیاں دیکھ کر جب اہل علاقہ احتجاج کرتے ہیں تو یہ اپنی مخصوص مدت کرنے کے بعد وہاں سے منتقل ہوجاتے ہیں اور اسٹیٹ ایجنٹس ان کو کسی دوسرے مقام پر جگہ دلادیتے ہیں جس کی وجہ سے نہ صرف ان علاقوں میں رہنے والوں کو اذیت کا سامنا کرنا پڑتا ہے بلکہ نوجوان نسل بھی بے راہ روی کا شکار ہورہی ہے ۔اس ضمن میں شہری حلقوں کا کہنا ہے کہ پولیس کی جانب سے فحاشی اور دیگر قبیح جرائم کے خلاف کارروائیوں کی خبریں تو تواتر کے ساتھ شائع ہوتی ہیں لیکن عملی طور پر اس ناسور کے خاتمے کے لیے کوئی اقدامات نہیں کیے جارہے ہیں بلکہ پولیس کی سرپرستی میں ہی یہ جرائم پنپ رہے ہیں ۔شہریوں نے آئی جی سندھ ،کراچی پولیس چیف اور دیگرمتعلقہ حکام سے مطالبہ کیا کہ شہر میں بڑھتے ہوئے فحاشی کے اڈوں کے خلاف کارروائی کی جائے اور اس میں ملوث اسٹیٹ ایجنٹوں سمیت دیگر عناصر کو قرار واقعی سزا دلوائی جائے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر