’یہ میرے والدین ہیں جو۔۔۔‘ نوجوان نے یہ تصویر شیئر کی تو پوری دنیا ہاں میں ہاں ملانے لگی، کیا کہا؟ جان کر آپ کہیں گے آپ کے والدین بھی یہی کرتے ہیں

’یہ میرے والدین ہیں جو۔۔۔‘ نوجوان نے یہ تصویر شیئر کی تو پوری دنیا ہاں میں ...
’یہ میرے والدین ہیں جو۔۔۔‘ نوجوان نے یہ تصویر شیئر کی تو پوری دنیا ہاں میں ہاں ملانے لگی، کیا کہا؟ جان کر آپ کہیں گے آپ کے والدین بھی یہی کرتے ہیں

  

نئی دلی(نیوز ڈیسک)بڑھاپے کی عمر کو پہنچنے پر بزرگوں کا رویہ کچھ دلچسپ و عجیب سا ہو جاتا ہے، جس پر نوجوان لوگ کبھی ہنستے ہیں تو کبھی نالاں نظر آتے ہیں۔ کہیں آنے جانے کی بات ہو تو خاص طور پر بزرگوں کا انداز دیکھنے لائق ہوتا ہے۔ ابھی سب لوگ اپنی تیاری شروع کر رہے ہوتے ہیں مگر پتا چلتا ہے کہ ہمارے بزرگ تو کب کے تیار ہو چکے ہیں اور اب سب کو اُن کی سستی و کاہلی پر کوس رہے ہیں۔ عموماً وہ اس بات پر متفکر نظر آتے ہیں کہ بہت دیر ہو رہی ہے، چاہے ابھی روانگی میں کتنا ہی وقت کیوں نا پڑا ہو۔

بھارتی شہر نئی دلی سے تعلق رکھنے والے وکیل وشنو نے سوشل میڈیا پر اپنے والدین کی ایک تصویر شیئر کی ہے، اور اتفاق سے یہ تصویر بزرگوں کے عین اسی رویے کی عکاس ہے، جسے سوشل میڈیا صارفین نے فوراً پہچان لیا ہے۔ اس تصویر میں وشنو کی والدہ اور والد چھٹیوں پر جانے کے لئے تیار نظر آتے ہیں۔ انہوں نے اپنے سامان سے بھرے بریف کیس تیار کررکھے ہیں اور پرواز کے ٹائم سے کئی گھنٹے پہلے پوری طرح تیار ہوکر بیٹھے ہیں۔ وشنو نے تصویر کے ساتھ لکھا ہے ”میرے والدین کی پرواز کا وقت سہ پہر 3بجکر 10منٹ ہے اور وہ صبح 10بجکر 33 منٹ پر سب تیاریاں مکمل کرکے بیٹھے ہیں۔“

اس سادہ سی تصویر نے انٹرنیٹ پر ہزاروں لوگوں کے دلوں کو چھولیا ہے۔ اسے 40ہزار سے زائد مرتبہ لائیک کیا گیا ہے اور 14 ہزار سے زائد مرتبہ ری ٹویٹ کیا گیا ہے۔ اس تصویر پر بے شمار کمنٹ بھی کئے گئے ہیں جن میں زیادہ تر لوگوں نے اسی بات کا اظہار کیا ہے کہ ہم سب کے والدین ایک جیسے ہی ہوتے ہیں۔ وہ عمر بھر ہمارے لئے محنت اور مشقت کرتے ہیں اور عموماً ہماری نسبت بہت زیادہ منظم بھی ہوتے ہیں۔ انہیں کہیں جانا ہوتا ہے تو وہ وقت سے بہت پہلے تیار ہوجاتے ہیں اور ہم انہیں دیکھ کر حیران ہوتے رہتے ہیں۔

امتیاز نامی ایک سوشل میڈیا صارف نے لکھا ”اس تصویر کو دیکھ کر مجھے اپنے والدین یاد آگئے۔ ہم نے کہیں جانا ہوتو میرے والد سب سے پہلے تیار ہوکر بیٹھے ہوتے ہیں اور دوسروں پر برہم ہورہے ہوتے ہیں کہ وہ تیاری میں اتنی دیر کیوں کررہے ہیں۔ اکثر ایسا ہوتا ہے کہ وہ دو گھنٹے پہلے ہی تیار ہوکر بیٹھ جاتے ہیں اور سب کو جلدی تیار ہونے کا کہہ رہے ہوتے ہیں کہ کہیں ہم لیٹ نہ ہوجائیں۔“

ڈاکٹر سندانہ نامی ایک خاتون نے لکھا ”نوجوانو! جب تم سب بوڑھے ہوجاﺅ گے تو دیکھنا تم بھی ہمارے جیسے ہی ہوجاﺅ گے۔ سب والدین ایک جیسے ہی ہوتے ہیں اور تم جب ہماری عمر میں آجاﺅ گے تو اس بات کو جان سکو گے۔ میرے بچے بھی اس بات پر ہنستے ہیں کہ میں ضرورت سے زیادہ محتاط اور متفکر ہوجاتی ہوں لیکن میں ان کی باتوں کا برا نہیں مناتی بلکہ ان کے خیالات سے لطف اندوز ہوتی ہوں۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /بین الاقوامی