’یہ خط مجھ سے شیطان نے لکھوایا ہے اور۔۔۔‘ 300 سال قبل عیسائی نن کی جانب سے لکھے جانے والے خط کا بالآخر کمپیوٹر کے ذریعے ترجمہ کرلیا گیا، اس میں کیا لکھا ہے؟ ایسی بات جو کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

’یہ خط مجھ سے شیطان نے لکھوایا ہے اور۔۔۔‘ 300 سال قبل عیسائی نن کی جانب سے ...
’یہ خط مجھ سے شیطان نے لکھوایا ہے اور۔۔۔‘ 300 سال قبل عیسائی نن کی جانب سے لکھے جانے والے خط کا بالآخر کمپیوٹر کے ذریعے ترجمہ کرلیا گیا، اس میں کیا لکھا ہے؟ ایسی بات جو کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

  

روم(نیوز ڈیسک)تین صدیاں قبل جزیرے سسلی کے کانونٹ آف پالما ڈی مونٹی شیارو کی راہبہ سسٹر ماریہ کروسی فیسا پر کچھ ایسے غصب کا شیطانی حملہ ہوا کہ یہ واقعہ تاریخ کی کتابوں میں محفوظ ہو گیا اور آج تک لوگ اس کا ذکر کرتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ وہ ایک رات وہ اچھی بھلی اپنے کمرے میں گئیں لیکن اچانک شیطان نے اُن پر حملہ کر دیا اور سسٹر ماریہ رات بھر وہ باتیں لکھتی رہیں جن کا شیطان اُن سے مطالبہ کرتا رہا۔ وہ 15 سال کی عمر سے کانونٹ میں مقیم تھیںاور اس رات پہلی بار یہ واقعہ پیش آیا کہ انہیں بار بار دورے پڑتے تھے وہ بار بار بے ہوش ہوتی رہیں۔ جونہی ہوش میں آتیں تو کاغذ قلم پکڑتیں اور پھر لکھنا شروع کر دیتیں۔

سسٹر ماریہ کی یہ تحریریں کسی عجیب و غریب زبان میں تھیں جنہیں سمجھنا کسی کے لئے بھی ممکن نہیں تھا، مگر آج تین صدیاں بعد اٹلی کے ’لوڈم سائنس سنٹر‘ کے ماہرین پہلی بار ایک کمپیوٹر سافٹ وئیر کے ذریعے ان پُر اسرار خطوط میں سے ایک کا ترجمہ کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ یہ ترجمہ ڈارک ویب پر دستیاب ایک سافٹ ویئر کی مدد سے ممکن ہوا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ یہ سافٹ ویئر دنیا بھر کی انٹیلی جنس ایجنسیاں خفیہ کوڈز کو پڑھنے کے لئے استعمال کرتی ہیں۔

سائنسدان ڈینیئل ایبٹ نے بتایا کہ سسٹر ماریہ کے ایک خط کے ترجمے سے معلوم ہوا ہے کہ یہ واقعی شیطانی کلمات پر مبنی ہے جن کے ذریعے شیطان سسٹر ماریہ کو ان کے عقیدے سے گمراہ کرنے کی کوشش کرتا رہا۔ سسٹر ماریہ نے اس خط میں لکھا ہے کہ ”رات کے وقت شیطان میرے کمرے میں ظاہر ہوا اور کہنے لگا کہ خدا پر ایمان چھوڑ دو کیونکہ تمہار ایمان تمہیں تباہی سے بچانہیں سکتا۔اُس نے یہ بھی کہا کہ خدا کا تصور خود انسان کا ایجاد کردہ ہے، یہ کوئی ابدی حقیقت نہیں ہے جس پر تم اتنی سختی سے کاربند ہو۔ وہ مجھ سے بار بار یہی باتیں کہتا تھا اور میں ہر بار اُس کی باتوں کا انکار کرتے ہوئے اُسے دھتکارتی تھی۔“

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ سائنسدان ڈینیئل ایبٹ نے اپنی ذاتی رائے بیان کرتے ہوئے کہا کہ غالباً سسٹر ماریہ پر کسی شیطانی قوت کا سایہ نہیں تھا بلکہ وہ شیزوفرینیا جیسی کسی نفسیاتی بیماری میں مبتلا تھیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس