”مقتدر حلقوں نے عمران خان سے کہاتھا کہ عثمان بزدار کوہٹا دیں لیکن۔۔۔“، حامد میر نے بڑا دعویٰ کردیا

”مقتدر حلقوں نے عمران خان سے کہاتھا کہ عثمان بزدار کوہٹا دیں لیکن۔۔۔“، حامد ...
”مقتدر حلقوں نے عمران خان سے کہاتھا کہ عثمان بزدار کوہٹا دیں لیکن۔۔۔“، حامد میر نے بڑا دعویٰ کردیا

  


اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) تجزیہ کارحامد میر نے کہاہے کہ تحریک انصاف کے اپنے ساتھیوں کے علاوہ کچھ مقتدر حلقوں نے بھی وزیراعظم عمران خان سے کہاتھا کہ عثمان بزدار کو ہٹادیں کیونکہ ان سے صوبہ نہیں چل رہا لیکن عمران خان نے ان کی بھی نہیں سنی ۔

جیونیوز کے پروگرام ”آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ“میں گفتگو کرتے ہوئے حامدمیر نے کہا کہ جب اسدعمر کو وزارت خزانہ سے ہٹایا گیا تو ہمیں بتایا گیا تھا کہ کچھ دنوں میں عثمان بزدار کو بھی ہٹادیا جائیگا جب یہ تجویز عمران خان کے سامنے رکھی گئی تو عمران خان نے صاف انکار کردیا جس سے مجھے پتہ چلا کہ عمران خان کو جو کٹھ پتلی کہا جاتا ہے وہ درست نہیں ہے ۔

عثمان بزدار کا کہنا تھاکہ اپنے ساتھیوں کے علاوہ کچھ مقتدر حلقوں نے بھی عمران خان سے کہاتھا کہ عثمان بزدار کو ہٹادیں کیونکہ ان سے صوبہ نہیں چل رہا لیکن عمران خان نے ان کی بھی نہیں سنی تھی ۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کے ساتھ پنجاب میں ایک مسئلہ ہے کہ تحریک انصاف میں پنجاب میں بہت سے گروپ ہیں ، اگر عمران خان کسی ایک گروپ کا وزیر اعلیٰ لاتے ہیں تو دوسرا گروپ ناراض ہوجائیگا ۔ انہوں نے کہا کہ صرف عمران خان ہی نہیں بلکہ پرویز الہٰی بھی عثمان بزدار کے پیچھے کھڑے ہیں ۔ عثمان بزدار کی نہ ہٹانے کی وجہ یہ ہے کہ عمران خان تحریک انصاف کو گروپنگ سے بچانا چاہتے ہیں۔ عمران خان نے ایک اور بات کی ہے کہ چھ ماہ یا ایک سال کے بعد میڈیا عثمان بزدار کے گن گانا شروع کردے گا ۔

مزید : قومی


loading...