موٹروے زیادتی کیس، جب پہلا پولیس اہلکار متاثرہ خاتون کے پاس پہنچا تو اس نے کیا دیکھا؟ دل دہلا دینے والی تفصیلات

موٹروے زیادتی کیس، جب پہلا پولیس اہلکار متاثرہ خاتون کے پاس پہنچا تو اس نے ...
موٹروے زیادتی کیس، جب پہلا پولیس اہلکار متاثرہ خاتون کے پاس پہنچا تو اس نے کیا دیکھا؟ دل دہلا دینے والی تفصیلات

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) لاہور سیالکوٹ موٹروے پر زیادتی کا نشانہ بننے والی خاتون کے حوالے سے اس پولیس اہلکار نے دل دہلا دینے والا انکشاف کیا ہے جو سب سے پہلے موقع پر پہنچا تھا۔

نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے ڈولفن پولیس کے اہلکار علی عباس نے بتایا کہ انہیں 2 بج کر 49 منٹ پر مددگار فائیو کے ذریعے واقعے کے بارے میں اطلاع ملی ۔ وہ موقع پر پہنچے تو اندھیرے کی وجہ سے کچھ نظر نہیں آرہا تھا۔ گاڑی کھڑی تھی اور اس کے شیشے ٹوٹے ہوئے تھے جبکہ اس میں ایک بچے کا جوتا پڑا ہوا تھا جبکہ دوسرا جوتا جھاڑیوں میں نظر آیا۔

ڈولفن اہلکار کے مطابق انہوں نے پہلے 6 ہوائی فائر کیے جس کے بعد ٹارچ کی لائٹ ماری اور آواز لگائی کہ کوئی ہے؟ جس پر خاتون کی کپکپاتی آواز سنائی دی۔ خاتون نے اپنے بچوں کو اپنے حصار میں لے رکھا تھا اور اس نے کپکپاتی آواز میں کہا "بھائی"۔ خاتون بہت زیادہ پریشان نظر آرہی تھی۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -