حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمائش ہے

حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمائش ہے
حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمائش ہے

  

حضورِ شاہ میں اہلِ سخن کی آزمائش ہے

چمن میں خوش نوایانِ چمن کی آزمائش ہے

قد و گیسو میں قیس و کوہکن کی آزمائش ہے

جہاں ہم ہیں ، وہاں دار و رسن کی آزمائش ہے

کریں گے کوہکن کے حوصلے کا امتحاں آخر

ہنوز اُس خستہ کے نیروۓ تن کی آزمائش ہے

نسیمِ مصر کو کیا پیرِ کنعاں کی ہوا خواہی!

اُسے یوسف کی بُوئے پیرہن کی آزمائش ہے

وہ آیا بزم میں ، دیکھو ، نہ کہیو پھر کہ ”غافل تھے“

شکیب و صبرِ اہلِ انجمن کی آزمائش ہے

رہے گر دل میں  تیر ، اچھا ، جگر کے پار ہو ، بہتر

غرض شستِ بُتِ ناوک فگن کی آزمائش ہے

نہیں کچھ سُبحۂ و زُنّار کے پھندے میں گیرائی

وفاداری میں شیخ و برہمن کی آزمائش ہے

پڑا رہ ، اے دلِ وابستہ ! بیتابی سے کیا حاصل؟

مگر پھر تابِ زُلفِ پُرشکن کی آزمائش ہے

رگ و پَے میں جب اُترے زہرِ غم ، تب دیکھیے کیا ہو!

ابھی تو تلخیِ کام و دہن کی آزمائش ہے

وہ آویں گے مِرے گھر ، وعدہ کیسا ، دیکھنا ، غالبؔ!

نئے فتنوں میں اب چرخِ کُہن کی آزمائش

Huzoor e Shah Men Ehl e Sukhan Ki Aazmaaish Hay

Chaman Men Khush Nawayaan e Chaman Ki Aazmaaish Hay

Qad o Gaisu Men Qais o Kohkan Ki Aazmaaish Hay

Jahaan Ham Haen Wahaan Dar o Rasan Ki Aazmaaish Hay

Karen Gay kohkan K Haoslay Ka Imtehaan Aakhir

Hunooz Uss Khasta K Neerv e Tan Ki Aazmaaish Hay

Naseem Misr Ko Kaya Peer Kiaan Ki Hawaa Khahi

Usay YOUSAF Ki Boo e Pairhan Ki  Aazmaaish Hay

Wo Aaya Bazm Men Dekho na Kahio Phir Ghaafil Thay

Shakaib o Sabr e Ehl e Ajuman Ki Aazmaaish Hay

rahay gar Dil Men Tera Acha Jigar K Paar Ho , Nehtar

Gharaz  Shust e But e Naavak Fagan Ki Aazmaaish Hay

Nahen Kuch Subh o Zunnaar k Phanday Men Geeraai

Wafaadaari Men Shaikh o Barehman Ki Aazmaaish Hay

Pasrra Reh Ay Dil e Waabasta , Betaabi Say Kaya Haasil

Magar Phir Taab Zulf e Pur Shikan Ki Aazmaaish Hay

Rag o Pay Men Jab Utray Zehr , Tab Deklhay Kaya Ho

Abhi To Talkhi e Kaam o Dahan Ki Aazmaaish Hay

Wo Aaey Gay Miray Ghar , Waada Kaisa , Dekhna GHALIB

Naey Fitnon Men Ab Charg e Kohan Ki Aazmaaish Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -