شرابِ ناب ہو، پہلومیں گلعذار رہے

شرابِ ناب ہو، پہلومیں گلعذار رہے
شرابِ ناب ہو، پہلومیں گلعذار رہے

  

شرابِ ناب ہو، پہلومیں گلعذار رہے

ہمارے سامنے یارب! نئی بہار رہے

سوالِ عفوِ گنہ پر کسی کا یہ کہنا

تمہیں کو دفن کریں دل میںجو غبار رہے

جو آپ آئینہ ، ہم عکسِ آئینہ ٹھہرے

جو آپ سنگ تو ہم سنگ میں شرار رہے

کسی کی یاد ہو اے حشر یوں چھپی دل میں

کہ جس طرح سے رہِ سنگ میں شرار رہے

شاعر: حشرکاشمیری

Sharaab e Naab Ho Pehlu Men Gulazaar Rahay

Hamaaray Saamnay Ya RAB Nai Bahaar Rahay

Sawaal e Afv e Gunah Par Kisi Ka Yeh Kehna

Tumhen Ko  Dafn Kahren Dil Men Jo Ghubaar Rahay

Jo Aap Aaina, Ham Aks e Aain Thehray

Jo Aap Sang To Ham Sang Men Sharaar Rahay

Kisi Ki Yaad Ho Ay HASHR Yun Chupi Dil Men

Keh Jiss Tarah Rag e Sang Men Sharaar rahay

Poet: Hashr Kashmiri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -