اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے
اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

  

اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

مر کے بھی چین نہ پایا تو کدھر جائیں گے

سامنے چشمِ گہربار کے کہ دو  دریا

چڑھ کے گر آے تو نظر وں سے اتر  جائیں گے

تم نے ٹھہرائی اگر غیر کے گھر جانے کی

تو ارادے یہاں کچھ اور ٹھہر جائیں گے

خالی اے چارہ گرو ہوں گے بہت مرہم داں

پر مرے زخم نہیں ایسے کہ بھر جائیں گے

اے جو مست ہیں تربت پہ گلابی آنکھیں

اور اگر کچھ نہیں دو پھول تو دھر  جائیں گے

پہنچیں گے رہ گزر یار تلک کیوں کر ہم

پہلے جب تک نہ دو عالم سے گزر جائیں گے

آگ دوزخ کی بھی ہو جاے گی پانی پانی

جب یہ عاصی عرقِ شرم سے تر جائیں گے

ہم نہیں وہ جو کریں خون کا دعویٰ تجھ سے

بلکہ پوچھے گا خدا بھی تو مکر جائیں گے

شعلۂ آہ کو بجلی کی طرح چمکاؤں

پر مجھے ڈر ہے کہ وہ دیکھ کے ڈر جائیں گے

ہم نہیں وہ جو کریں خون کا دعویٰ تجھ پر

بلکہ پوچھے گا خدا بھی تو مکر جائیں گے

آگ دوزخ کی بھی ہو جائے گی پانی پانی

جب یہ عاصی عرق شرم سے تر جائیں گے

نہیں پائے گا نشاں کوئی ہمارا ہرگز

ہم جہاں سے روش تیر نظر جائیں گے

سامنے چشم گہر بار کے کہہ دو دریا

چڑھ کے گر آئے تو نظروں سے اتر جائیں گے

لائے جو مست ہیں تربت پہ گلابی آنکھیں

اور اگر کچھ نہیں دو پھول تو دھر جائیں گے

رخ روشن سے نقاب اپنے الٹ دیکھو تم

مہر و ماہ نظروں سے یاروں کی اتر جائیں گے

ہم بھی دیکھیں گے کوئی اہل نظر ہے کہ نہیں

یہاں سے جب ہم روش تیر نظر جائیں گے

ذوقؔ جو مدرسے کے بگڑے ہوئے ہیں ملا

ان کو مے خانے میں لے آؤ سنور جائیں گے

شاعر: ابراہیم ذوق

(دیوانِ ذوق:مرتبہ انوارلحسن صدیقی؛سنِ اشاعت1957)

Ab To Ghabra K Yeh Kehtay Hen Keh Mar Jaen Gay

Mar Gaey Par Na Laga Ji To Kidhar Jaen Gay

Saamnay Chasm e Gohar Baar K Keh Do Darya

Charrh K Aaey Ti Nazroin Say Utar Jaaen Gay

Tum Nay Thehraai Agar Ghair K Ghar Jaanay Ki

To Iraaday Phir Yahaan Aor Thahir Jaaen Gay

Khaali Ay Hamdamo Hon Gay Bahut Marham Daan

Par Miray Zakhm Nnahen Aisay Keh Bhar Jaaen Gay

Ay Jo Mast Hen Turbat Pe Gulaabi Aankhen

Aor Agar Kuch Nahen Do Phool To Dhar Jaaen Gay

Pahonchen Gay reh guzar e Yaar Talak Kiun Kar Ham

Pehlay JabTak Na Do Aalam Say Guzar Jaaen Gay

Aag Dozakh Ki Bhi Ho Jaaey Gi Paani Paani

Jab Yeh Aasi Araq e Sharm Say Tar Jaaen Gay

Ham Nahen Wo  Jo Karen Khoon Ka Daawa Tujh Say

Balkeh Khuda Bhi Poochay Ga To MukarJaaen Gay

Raukh e Roshan Say Naqaab Apnay Ulat Dekho Tum

Mehr o Maah Nazron Say Yaar Din K Utar Jaen Gay

Shola e Aah Ko Bijli Ki Tarah Chamkaaun

Par Yahi Dar Hay Keh Wo Dekh K dar Jaaen Gay

Ham Bhi Deken Ggay Keh Ki  Ehl e Nazar Hay Keh Nahen

Yahaan Say Jab Ham Rosh Teer e Nazar Jaaen Gay

ZAUQ Jo Madrasaa K Bigrray Huay Hen Mulla

Un Ko May Khaanay Men Lay Aao Sanwar Jaaen Gay

Poet: Ibrahim Zauq

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -