نائن الیون ، امریکہ کی افغانستان پر چڑھائی کی تیاریاں لیکن پاکستان کی طرف سے پرویز مشرف نے کیا تجویز دی تھی؟ آئی ایس آئی کے سابق سربراہ نے چشم کشا انکشاف کردیا

نائن الیون ، امریکہ کی افغانستان پر چڑھائی کی تیاریاں لیکن پاکستان کی طرف سے ...
نائن الیون ، امریکہ کی افغانستان پر چڑھائی کی تیاریاں لیکن پاکستان کی طرف سے پرویز مشرف نے کیا تجویز دی تھی؟ آئی ایس آئی کے سابق سربراہ نے چشم کشا انکشاف کردیا

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) نائن الیون کے سانحے کے بعد جب امریکہ افغانستان پر چڑھائی کی منصوبہ بندی کر رہا تھا،اس وقت پاکستان نے اقوام متحدہ کو کیا تجویز دی تھی۔ اس حوالے سے آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل ریٹائرڈ احسان الحق نے چشم کشا انکشاف کر دیا ہے۔ آج امریکہ کے پسپا ہو کر افغانستان سے نکلنے پر عرب نیوز کو دیئے گئے اپنے ایک انٹرویو میں احسان الحق نے کہا ہے کہ پاکستان نے نائن الیون کے سانحے کے بعد تجویز پیش کی تھی کہ افغانستان پر امریکہ و نیٹو افواج کی چڑھائی کی بجائے اقوام متحدہ مداخلت کرے۔یہ تجویز امریکی انتظامیہ کو اعلیٰ سطح پر دی گئی تھی۔ 

جنرل ریٹائرڈ احسان الحق کا کہنا تھا کہ ”پاکستان کی طرف سے امریکی صدر، وزیرخارجہ، سی آئی اے کے ڈائریکٹر اور دیگر سرکردہ امریکی رہنماﺅں کو یہ تجویز دی گئی تھی۔یہ پاکستان اور سعودی عرب کا مشترکہ اقدام تھا۔ میں نے مرحوم سعودی شہزادے سعود الفیصل کے ساتھ واشنگٹن کا مشترکہ دورہ کیا تھا۔ یہ دورہ افغانستان میں کسی بھی ممکنہ جنگ کو ٹالنے کی ایک کوشش تھا۔ میں پاکستان کے اس وقت کے صدر پرویز مشرف کی طرف سے 4صفحات پر مشتمل ایک خط لے کر گیا تھا اور یہ خط میں نے امریکی صدر جارج ڈبلیو بش کو دیا تھا۔“

جنرل ریٹائرڈ احسان الحق نے بتایا کہ” اس خط میں تجویز پیش کی گئی تھی کہ افغانستان کے قضیے کا حل اقوام متحدہ کی مداخلت سے نکالا جانا چاہیے اور مذاکرات کے ذریعے طالبان کو القاعدہ کے خلاف کارروائی پر آمادہ کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔اگر امریکہ نے پاکستان کی بات سنی ہوتی تو افغانستان میں لڑی جانے والی طویل ترین اور مہنگی ترین جنگ ٹالی جا سکتی تھی۔تاہم امریکیوں نے وہ موقع ضائع کر دیا جو خود انہیں اور افغان عوام کو خون خرابے سے بچا سکتا تھا۔“

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -