’جس غیر ملکی کی عمر 50 سال سے اوپرہوجائے، اسے ملک سے نکال دو‘ بڑے عرب ملک میں ایسا قانون متعارف کروانے کی تیاری کہ مقیم غیر ملکیوں کی نیندیں اڑادیں

’جس غیر ملکی کی عمر 50 سال سے اوپرہوجائے، اسے ملک سے نکال دو‘ بڑے عرب ملک میں ...
’جس غیر ملکی کی عمر 50 سال سے اوپرہوجائے، اسے ملک سے نکال دو‘ بڑے عرب ملک میں ایسا قانون متعارف کروانے کی تیاری کہ مقیم غیر ملکیوں کی نیندیں اڑادیں

  

مانامہ (مانیٹرنگ ڈیسک) عالمی منڈی میں تیل کی قیمت گرنے کے بعد عرب معیشتیں مشکلات کا سامنا کررہی ہیں۔ ان مشکلات کے نتیجے میں عرب ممالک میں کام کرنے والے تمام غیر ملکیوں کے لئے مسائل پیدا ہوئے ہیں، لیکن معمر غیر ملکیوں کے لئے تو صورتحال کچھ زیادہ ہی دردناک ہوتی نظر آرہی ہے۔

نیوز سائٹ عریبین بزنس کے مطابق بحرین کی پارلیمنٹ میں قانون تبدیل کرنے کی ایک ایسی تجویز پیش کی گئی ہے کہ جس کی منظوری کی صورت میں 50 سال سے زائد عمر کے غیر ملکیوں کے کام کرنے پر پابندی عائد کر دی جائے گی۔ اس قانونی ترمیم کی تجویز نیشنل پارٹنر شپ پارلیمنٹری بلاک کی طرف سے سامنے آئی ہے۔ اس گروپ کے ارکان کا کہنا ہے کہ 50 سال کی عمر کو پہنچنے کے بعد غیر ملکیوں کی کارکردگی میں کمی آجاتی ہے اور وہ اپنے نوجوان ساتھیوں کی طرح کام نہیں کرپاتے، لہٰذا انہیں ملازمت پر رکھنے کا کوئی فائدہ نہیں۔

دبئی میں کاررینٹل کمپنی کاعرب مالک 26سالہ فلپائنی ملازمہ سے جنسی زیادتی پر گرفتار

اگرچہ موجودہ قانون میں غیر ملکیوں کے کام کرنے پر پابندی کی کوئی عمر مختص نہیں ہے، البتہ بحرینی اور غیر ملکی شہریوں کے لئے ریٹائرمنٹ کی عمر 60 سال ہے۔ اگر غیر ملکی شہری میڈیکل ٹیسٹ پاس کرتے ہیں تو وہ ریٹائرمنٹ کے بعد بھی کام کرنا جاری رکھ سکتے ہیں۔ دوسری صورت میں اگر قانون میں ترمیم کی جاتی ہے تو غیر ملکیوں کو 50 سال کے بعد ملازمت پرپابندی کا سامناکرنا پڑے گا، اور وہ بحرین میں مزید کام کرنے کے اہل نہ ہوں گے۔

واضح رہے کہ اس سے پہلے ایک رکن پارلیمنٹ یہ تجویز بھی دے چکے ہیں کہ غیر ملکیوں پر اضافی ٹیکس عائد کیا جائے۔ ان صاحب کا کہنا تھا کہ غیر ملکیوں پر اضافی ٹیکس لگا کر ہر سال ایک ارب ڈالر (تقریباً100 ارب پاکستانی روپے) کی اضافی رقم حاصل ہو سکتی ہے۔

مزید :

عرب دنیا -