اورنج ٹری منصوبہ کے متاثرہ ریلوے کوارٹرز کے مکین متبادل چھت سے محروم

اورنج ٹری منصوبہ کے متاثرہ ریلوے کوارٹرز کے مکین متبادل چھت سے محروم

لاہور(وقائع نگار) اورنج لائن میٹرو ٹرین کی زد میں آنیوالے ریلو ے کوارٹرز کے ملازمین کو محکمہ نے بے یار و مدد گار چھوڑ دیا ،ملازمین معاوضہ یا متبادل کوارٹرز حاصل کرنے کے لیے ڈی ایس آفس کے چکر لگانے پر مجبور ہو گئے ۔تفصیلات کے مطابق لاہور میں جاری اورنج لائن میٹرو ٹرین منصوبہ کی زد میں ریلوے کے 1000سے زائد ملازمین کے کوارٹرز آتے ہیں جن کو پنجاب حکومت کی جانب سے مسمار ر دیا گیا ہے ۔متاثرین نے نمائندہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ریلوے حکام کی جانب سے ان کو پہلے تو معاوضہ ادا کرنے کا کہا گیا تھا جبکہ بعد ازاں انہوں نے ان کے لیے نئے کوارٹرز تعمیر کروا کے ان کو الاٹمنٹ دینے کا کہا لیکن نئے کوارٹرز بنوانے کے حوالے سے ابھی تک کوئی ڈیڈ لائن نہیں دی گئی کہ وہ انہیں کب الاٹ کیے جائیں گے ۔ملازمین نے بتایا کہ محکمہ کی جانب سے ان کو بے یار و مدد گار چھوڑ دیا گیا ہے اور وہ کرایہ کے مکانوں پر رہنے پر مجبور ہیں جبکہ اس حوالے سے محکمہ کرایہ اور بلوں کی مد میں دی جانے والی مراعات بھی انہیں فراہم نہیں کر رہا ۔ ریلوے ورکرز یونین کے مطابق حکومت پنجاب کی جانب سے محکمہ ریلوے کو گرائے گئے کوارٹرزکا معاوضہ ادا کر دیا گیا ہے لیکن محکمہ کی جانب سے نہ تو متاثرہ 150خاندانوں کو کسی قسم کا معاوضہ دیا جا رہا ہے اور نہ ہی نئی الاٹمنٹ دی جا رہی ہے جو کہ صریحا " زیادتی ہے ۔ متاثرہ ملازمین ڈی ایس آفس کے چکر لگالگا کر تنگ آ چکے ہیں لیکن انہیں کئی ماہ سے کچھ حاصل نہیں ہو رہا اگر یہ صورتحال برقرار رہی تو وہ احتجاج کرنے کے لیے سڑکوں پر نکل آئیں گے۔اس حوالے سے ریلوے کے ترجمان اعجاز شاہ سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ان ملازمین کے لیے گڑھی شاہو میں ایک کالونی تعمیر کی جا رہی ہے جب کوارٹرتعمیر ہو جائیں گے تو ان کو یہاں پر الاٹمنٹ دے دی جائے گی جب ان سے متاثرہ ملازمین کی موجودہ صورتحال کے تحت الاؤنس دیئے جانے اور عارضی رہائش فراہم کرنے کے حوالے سے پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ اورنج لائن منصوبہ شروع ہونے پر ان کوارٹرز کی مسماری طے تھی ان ملازمین کو نئی الاٹمنٹ دی جائے گی اس کے علاوہ اور کوئی مراعات دینے کا وعدہ نہیں کیا گیا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1