ٹوپی میں کالج اور سٹیڈیم کی افتتاحی تقریب ہنگامہ کی نذر

ٹوپی میں کالج اور سٹیڈیم کی افتتاحی تقریب ہنگامہ کی نذر

ٹوپی (نامہ نگار)کالج اور سٹیڈیم کا افتتاحی پروگرام ہنگا مہ آرائی اور شور شرابے کا شکار ، ٹوپی حدود میں تعمیر ہو نی والی کالج کی تختی پر کوٹھا کالج کیوں لکھا گیا ہے ، اسد قیصر کی موجودگی میں نامنظو ر نامنظورکے فلک شگاف نعرے ، تفصیلا ت کے مطابق اسد قیصر نے سپیکر شپ کا عہدہ سنھبالتے ہی ٹوپی تحصیل کی ترقی کیلئے کئی میگا پراجیکٹ کی تعمیر کا اعلان کیا تھا جس میں تحصیل سٹیڈیم اور ڈگری کالج بھی شامل ہے اس حوالے سے ان دونوں منصوبوں کا دس اپریل 2016 کو تین بجے افتتاح کیلئے وقت مققرر کیا گیا وقت مقررہ سے قبل ٹوپی کی چھ ولیج کونسلوں کی منتخب نمائندے اور ٹوپی جر گہ کے آراکین کثیر تعداد میں مقام مذ کورہ کو پہنچے جہاں انہوں نے سنگ بنیاد والی تختی پر کوٹھا کالج کا نام دیکھ کر سیخ پا ہو گئے اور کہا کہ آراضی مذ کورہ ٹوپی کی لوگوں کی ملکیت ہے اور حدود بھی ٹوپی کا ہے تو تختی پر بھی ٹوپی کالج لکھوا نا چاہیئے تھا اس دوران کئی بار حا لات خرابی کی طرف گئے مگر تحصیل ناظم سہیل یو سف زئی نائب ناظم محمد یونس خان ، حاجی رنگیز احمد خان اور دیگر کی کوششوں سے حالات نارمل ہو جا تا مگرجو ں ہی سپیکر اسد قیصر پہنچا اور نقاب کشائی کیلئے آگے بڑھا فضا ایک بار پھر نا منظور نامنظور کے نعروں سے گونج اٹھا حالات تاحال سخت کشیدہ ہے اور اگر اصلاح احوال کیلئے بر وقت اقدا مات نہیں کیا گیا تو کسی بھی وقت کچھ بھی ہو سکتا ہے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر