خیبر پختونخوا کے نئے بلدیاتی نظام میں پہلی بار عدم اعتماد تحریک

خیبر پختونخوا کے نئے بلدیاتی نظام میں پہلی بار عدم اعتماد تحریک

چارسدہ (بیورو رپورٹ ) خیبر پختون خوا کے نئے بلدیاتی نظام کی پہلی عدم اعتماد پیش کی گئی ۔ یونین کونسل ایم سی 4کے چیئرمین حاجی رفیع اللہ کے خلاف کونسل کے 12میں 10اراکین نے تحریک عدم اعتماد جمع کرائی ۔ نیب ، انٹی کرپشن ، وزیر بلدیات ، ڈپٹی کمشنر اور ضلع ناظم سے حاجی رفیع اللہ کے کرپشن کی انکوائری کا مطالبہ۔ سرکاری فنڈ میں خرد برد پرجنرل کونسلر ز نے چےئرمین یونین کونسل کے خلاف طبل جنگ بجا دیا ۔تفصیلات کے مطابق چارسدہ کے شہری علاقہ ایم سی فور کے 12میں سے 10کونسلر زاسد خان ،وقاص خان ،اصغر علی ،مراد علی ،محمد وکیل ،ایوب ، یوتھ کونسلر عدنان ،خواتین کونسلر ز زرنوشہ ،فرزانہ اور اقلیتی خاتون کونسلرز شیری جمیل نے اجتماعی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین حاجی رفیع اللہ کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک جمع کرنے کا اعلان کیا ۔ اُنہوں نے چیئرمین حاجی رفیع اللہ پر خرد برداور بد انتظامی کے سنگین الزامات لگاتے ہوئے کہا کہ چےئرمین رفیع اللہ نے یو سی دفتر کے تزین و آرائش ، سٹیشنری ، کمپیوٹر،پرنٹر ،سکینر ،فرنیچر اور دیگر اشیاء کی خریداری کیلئے 5لاکھ روپے نکالے جس میں انہوں نے 2لاکھ پچاس ہزار روپے کا دفتری سامان خریدا ۔ آڈٹ کمیٹی کے چیئرمین چےئرمین اسد جان نے مسلسل چار اجلاسوں میں چےئرمین رفیع اللہ سے 2لاکھ پچاس ہزار روپے آڈٹ کا مطالبہ کیا لیکن موصوف نے خود کو احتساب کیلئے پیش کرنے کی بجائے چوری اور سینہ زوری کا مظاہر ہ کرتے ہوئے معزز کونسل ممبران کی بے عزتی کی ۔ انہوں نے چےئرمین رفیع اللہ پر الزام لگا یا کہ موصوف سیکرٹری یونین کونسل پر الزام لگا کر خود کو بری الزمہ قرار دینے کی کوشش کر رہے ہیں ۔اُنہوں نے کہاکہ بلدیاتی ایکٹ 2013دفعہ 84سیکشن ڈی کے تحت چیئرمین کے خلاف یونین کونسل کے سیکرٹری کے پاس عدم اعتماد کی تحریک جمع کرائی جائے گی ۔ انہوں نے وزیر بلدیات، ڈی جی نیب ،اے ڈی ، ڈپٹی کمشنر اور ضلعی ناظم سے چےئرمین رفیع اللہ کی کرپشن کی تحقیقات اور قانون کے کٹہرے میں لانے کا مطالبہ کیا ۔ بصورت دیگر وہ اجتماعی اسعتفیٰ دینے سے گریز نہیں کریں گے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر