سکول داخلہ مہم میں چائلڈ لیبر رکاوٹ ‘ خاتمہ کیلئے محکمہ تعلیم متحرک ہوگیا

سکول داخلہ مہم میں چائلڈ لیبر رکاوٹ ‘ خاتمہ کیلئے محکمہ تعلیم متحرک ہوگیا

ملتان( سٹاف رپورٹر) ’’ سکول داخلہ مہم میں چائلڈ لیبر رکاوٹ‘ پنجاب میں ڈیڑھ کروڑبچے مزدوری پر مجبور‘‘حقائق پر مبنی رپورٹ شائع ہونیکا حکام نے نوٹس لیا اور اس سلسلے میں اقدامات پر(بقیہ نمبر61صفحہ12پر )

غور شروع کر دیا جبکہ مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے اس پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے حکومت سے اس سنگین مسئلے پر فوری اقدامات کا مطالبہ کیا ہے اس سلسلے میں ای ڈی او ایجوکیشن نے شرح خواندگی بڑھانے کیلئے سرکاری سکولوں میں شام کی کلاسز شروع کرنے کی تجویز دے دی ہے‘ای ڈی او ایجوکیشن ملتان اشفاق گجر نے کہا ہے کہ چائلڈلیبر لعنت ہے‘ ‘اس پر پورے معاشرے کو سوچنا اور اسکے تدارک کے لئے کردار ادا کرنا چاہئیے‘ ’’پاکستان‘‘ کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اگر فروغ تعلیم کے لئے ہم ہر ممکن اقدامات کرنے کو تیار ہیں‘ایسے بچے جو دن میں نہیں پڑھ سکتے تو وہ شام کی کلاسز میں داخلہ لے سکتے ہیں’ اساتذہ کی ڈیوٹی لگائی جاسکتی ہے ‘فروغ تعلیم کے لئے اس تجویزپر عمل کیا جائے گا‘ اس بارے میں پیپلز لائرز فورم جنوبی پنجاب کے صدرحبیب اللہ شاکر ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ بچوں کی مشقت انسانیت سوز معاملہ ہے‘ اس پر سنجیدگی سے غور کرکے بچوں کو محفوظ رکھنا ہوگا‘‘مسلم لیگ (ن) کے رہنما چیئرمین یونین کونسل و امیدوار میئر طفیل اسحاق چوہان نے کہا کہ چائلڈ لیبر کے خاتمے کیلئے حکومت سنجیدگی سے اقدامات کر رہی ہے‘ ‘سماجی رہنما نعیم ارشد نے کہا ہے کہ چائلڈ لیبر ختم کرنے کے لئے اس کی وجوہات کو ختم کرنا ہوگا‘ ‘ماہر تعلیم نعیم طاہر نے کہا کہ معصوم بچوں کو کام پر لگانے والے والدین کیخلاف کارروائی کی جائے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر