بھارتی وزیر کی نوجوان لڑکی کے ساتھ جنسی زیادتی، پھر پولیس نے لڑکی کے باپ کا کیا حشر کیا ؟ ایسا انکشاف کہ پوری دنیا کانپ اٹھی، بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب ہوگیا

بھارتی وزیر کی نوجوان لڑکی کے ساتھ جنسی زیادتی، پھر پولیس نے لڑکی کے باپ کا ...
بھارتی وزیر کی نوجوان لڑکی کے ساتھ جنسی زیادتی، پھر پولیس نے لڑکی کے باپ کا کیا حشر کیا ؟ ایسا انکشاف کہ پوری دنیا کانپ اٹھی، بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب ہوگیا

  

نئی دہلی (ڈیلی پاکستان آن لائن) بھارتی ریاست اتر پردیش میں حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے رکن اسمبلی کلدیب سینگر نے ایک 18 سالہ لڑکی کو اجتماعی درندگی کا نشانہ بنایا جس کے بعد لڑکی کے والد کو پولیس نے حراست میں لے لیا اور شدید تشدد کا نشانہ بنا کر قتل کردیا۔ پولیس کی جانب سے رکن اسمبلی کے خلاف کسی قسم کی کارروائی نہیں کی گئی ، ڈی جی پی اتر پردیش کا کہنا ہے کہ کلدیپ سینگر کی گرفتاری کا فیصلہ سی بی آئی کرے گی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق ریاست یوپی کے ضلع اناﺅ میں ایک لڑکی کو حکمران جماعت کے ایم ایل اے کلدیپ سینگر نے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔ بچی کے ساتھ ہونے والی زیادتی کی شکایت کی گئی تو پولیس نے متاثرہ لڑکی کے والد کو حراست میں لے لیا اور اس پر شدید تشدد کیا جس کے نتیجے میں وہ ہسپتال پہنچنے سے پہلے ہی دم توڑ گیا۔

سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیوز میں لڑکی کے مقتول والد کے جسم پر شدید تشدد کے نشانات واضح طور پر دیکھے جاسکتے ہیں۔ ریپ کیس سامنے آنے پر یوپی کے وزیر اعلیٰ یوگی ادتیا ناتھ نے تحقیقات کا حکم دیا تاہم یہ معاملہ میڈیا کوریج اور بیان بازی سے آگے نہیں بڑھ سکا۔

دوسری جانب بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب رات گئے ملزم کلدیب سینگر نے ایس ایس پی کی رہائش گاہ پر جاکر سیکورٹی کا مطالبہ کیا، اس دوران انہوں نے کہا کہ جب بھی ان کی ضرورت ہوگی وہ حاضر ہوجائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ میں یہاں صرف اس لئے آیا ہوں ، کیونکہ کئی جگہ میرے بھگوڑا ہونے کی بات کہی جارہی تھی میں نے یہ دکھادیا ہے کہ میں بھگوڑا نہیں ہوں۔

اناؤ ریپ معاملے پر ملزم کلدیپ سینگرکی گرفتاری کے حوالے سے اتر پردیش پولیس کے ڈائریکٹر جنرل اوپی سنگھ نے واضح کیا ہے کہ فی الحال انہیں گرفتار نہیں کیاجائے گا بلکہ ان کی گرفتاری کا فیصلہ سی بی آئی کرے گی۔داخلی امور کے چیف سیکرٹری اروند کمار اور ڈی جی پی کی مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا گیا کہ پولیس ایم ایل اے کو بچانے کی کوشش نہیں کررہی بلکہ کوشش ہے کہ فریقین کو سن کر کارروائی ہو، تمام کیسز سی بی آئی کو ٹرانسفر کئے جا رہے ہیں،اب سی بی آئی کو فیصلہ کرنا ہوگا کہ ایم ایل اے کی گرفتاری کرنی ہے یا نہیں۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈی جی پی سنگھ نے کہا کہ ایم ایل اے ابھی ملزم ہیں اور قصوروار ثابت نہیں ہوئے ہیں ایس آئی ٹی کی رپورٹ کے بعد کارروائی کی جائے گی۔

مزید : اہم خبریں /بین الاقوامی /انسانی حقوق /جرم و انصاف