طاقت اور تشدد سے کشمیری عوام کو جدوجہد سے دستبردار نہیں کیا جا سکتا

طاقت اور تشدد سے کشمیری عوام کو جدوجہد سے دستبردار نہیں کیا جا سکتا

سری نگر (کے پی آئی ) کل جماعتی حریت کانفرنس (ع) کے چیرمین میرواعظ عمرفاروق نے سید علی شاہ گیلانی اور دیگر حریت پسند لیڈران کی مذہبی سرگرمیوں پر قدغن کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ طاقت اور تشدد سے کشمیری عوام کو جدوجہد سے دستبردار نہیں کیا جا سکتا ۔میرواعظ نے 15اگست کو یوم سیاہ کے طور پر منانے اور اس روز مکمل ہڑتال کا علان کرتے ہوئے کہا کہ شب قدر کے پیش نظر بعد ازنماز مغرب ٹریفک ہڑتال سے مستثنی ہوگی۔ انہوں نے مکہ معظمہ میں اس حوالے سے او آئی سی کے مجوزہ اجلاس اوراو آئی سی کے سیکریٹری جنرل احسان اوگلوکے اس بیان کا خیر مقدم کیا کہ جس میں انہوں نے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر او آئی سی کے ایجنڈے پر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ذمہ دار ادارے کی حیثیت سے او آئی سی کشمیر میں حقوق انسانی کی پامالیوں ، پرتشد د واقعات اور جیلوں میں نظربندوں کی حالت زار کا سنجیدہ نوٹس لیتے ہوئے اس ضمن میں بھارت پر دباﺅ ڈالے ۔انہوں نے برما میں نہتے مسلمانوں کے قتل عام اور بھارتی ریاست آسام میں لاکھوں مسلمانوں کو بے گھر اور درجنوں کو قتل کرنے کے واقعات پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان انسانیت سوز واقعات کو لے کر پوری امت مسلمہ غمزدہ ہے۔ حریت(ع) چیرمین نے کہا کہ ایک طرف عالم اسلام کے ساتھ ساتھ مسلمانان کشمیر رمضان المبارک کی سعادتوں سے بہرہ ور ہو رہے ہیں اور دوسری طرف برما اور آسام میں مسلمانوں کی نسل کشی ہمارے لئے باعث پریشانی ہے۔ انہوں نے او آئی سی سے اپیل کی کہ وہ فورا سے پیشتر ان واقعات کا سنجیدہ نوٹس لیں اور مسلمانوں کا قتل عام بند کروانے کے لئے برمی حکومت پر دباﺅ ڈالے۔میرواعظ محمد عمر فاروق نے رمضان المبارک میں بزرگ سیاسی رہنما سید علی گیلانی اور دیگر حریت پسند قائدین کی مسلسل نظر بندی اور ان قائدین کو نماز جمعہ کی ادائیگی اور دیگر مذہبی امورات پر قدغن کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے حکومت کی بوکھلاہٹ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانان کشمیر کے مذہبی پیشوا کی حیثیت سے میں حکومت کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ وہ فورا ان پابندیوں کو ہٹائیں ۔ انہوں نے کہا کہ طاقت اور تشدد سے کشمیری عوام کو مبنی برحق جدوجہد سے دستبردار نہیں کیا جا سکتا ۔ حریت(ع)چیرمین نے جمعالوداع کو آرپار کشمیر میں یوم قدس اور یوم کشمیر کے طور پہ منانے کے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس روز تمام مساجد خانقاہوں اور امام باڑوں میں اجتماعات منعقد ہونگے اور جامع مسجد میں لاکھوں لوگوں کی موجودگی میں کشمیر کے حوالے سے ایک اہم قرارداد منظور کی جائے گی جس کو بعد میں اقوام متحدہ اور او آئی سی کو بھیجاجائے گا تاکہ وہ کشمیر یوں کے جذبات اور احساسات کو ادارک کر سکیں۔ میرواعظ نے 15اگست کو یوم سیاہ کے طور پر منانے اور اس روز مکمل ہڑتال کا علان کرتے ہوئے کہا کہ شب قدر کے پیش نظر بعد ازنماز مغرب ٹریفک ہڑتال سے مستثنی ہوگی۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...