ہائیکورٹ کا پمپوں پر تیل کی بلا تعطل فراہمی کا حکم گرفتاریوں پر وفاقی صوبائی حکومت سے جواب طلب

ہائیکورٹ کا پمپوں پر تیل کی بلا تعطل فراہمی کا حکم گرفتاریوں پر وفاقی صوبائی ...

                       لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے شہر میں پٹرول پمپس پر تیل کی بلاتعطل فراہمی کا حکم دیدیاجبکہ تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی گرفتاریوں پر وفاقی اور پنجاب حکومت سے چوبیس گھنٹوں میں جواب طلب کرلیا ہے ۔عدالت نے مسلسل حکم کے باوجود عدم حاضری پر ڈی سی او لاہور کو توہین عدالت کا نوٹس بھی جاری کردیا ہے ۔لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس سید افتخار حسین شاہ نے شہر میں پٹرول پمپس پر پٹرولیم مصنوعات کی بندش، تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی گرفتاریوں اور نظر بندیوں کیخلاف چار درخواستوں کی سماعت کی، تحریک انصاف کے کارکن زبیر نیازی، صدر پی ٹی آئی پنجاب اعجاز چودھری، گوہر سندھو ایڈووکیٹ اور رانا آصف نے پٹرولیم مصنوعات کی بندش اور گرفتاریوں و نظربندیوں کیخلاف درخواستیں دائر کیں، درخواست گزاروں کے وکلا نے عدالت کو بتایا کہ آزادی مارچ روکنے کیلئے وفاقی اور پنجاب حکومت نے شہر کے تمام پٹرول پمپس بند کروا دیئے ہیں اور سیاسی کارکنوں کو نظر بند کیا جا رہا ہے جو آئین اور قانون کی خلاف ورزی ہے، انہوں نے استدعا کی کہ پٹرولیم مصنوعات کی فراہمی اور کارکنوں کی گرفتاریوں اور نظر بندیوں کو غیرقانونی قرار دے، پٹرولیم منصوعات کی بندش کے معاملے پر عدالت کی فوری ہدایت کے جواب میں وفاقی حکومت کی طرف سے سٹینڈنگ کونسل شائستہ قیصر نے عدالت کو آگاہ کیا کہ وفاقی حکومت کی طرف سے پٹرولیم مصنوعات بلاتعطل فراہم کی جا رہی ہیں جس پر عدالت ڈی سی او لاہور کیپٹن (ر) محمد عثمان کو طلب کیا تاہم دو گھنٹے گزرنے کے باوجود ڈی سی او لاہور عدالت میں پیش نہ ہوئے، ایڈووکیٹ جنرل آفس نے ڈی سی او کو تلاش کرنے کیلئے وائرلیس پر پیغامات بھی نشر کروائے مگرڈی سی او لاہور شام سوا چھ بجے تک عدالت کے روبرو اپنی حاضری یقنی نہ بنا سکے، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب حنیف کھٹانہ نے عدالت کو بتایا کہ شہر میں تمام پٹرول پمپس پر پٹرولیم مصنوعات بلاتعطل فراہم کی جا رہی ہیں، کسی بھی جگہ پر پٹرول پمپ بند نہیں ہیں، عدالت نے حکم دیا کہ شہر میں تمام پٹرول پمپس پر پٹرولیم مصنوعات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے اور ڈی سی او لاہور خود تیل کی سپلائی کی نگرانی کریں، عدالت نے عدم حاضری پر ڈی سی او لاہور کو توہین عدالت کا نوٹس بھی جاری کر دیا، تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے کارکنوں کی گرفتاریوں اور نظر بندیوں کیخلاف وفاقی اور پنجاب حکومت کو چوبیس گھنٹوں میں جواب داخل کرانے کا حکم دیدیا، عدالتی حکم پر ڈی آئی جی آپریشنز لاہور ڈاکٹر حیدر اشرف عدالت میں پیش ہوئے، انہوں نے بتایا کہ پولیس نے کسی پٹرول پمپ کو بند نہیں کروایا، شہر کے تمام داخلی و خارجی راستے ٹرانسپورٹ کی آمدورفت کیلئے کھول دیئے گئے ہیں، انہوں نے عدالت میں اعتراف کیا کہ سولہ ایم پی او کے تحت بعض سیاسی کارکنوں اور شخصیات کو نظربند کیا گیا ہے، عدالت نے حکم دیا کہ نظر بند کئے گئے کارکنوں اور شخصیات کی تعداد کے بارے میں بھی عدالت کو آگاہ کیا جائے، عدالت نے تمام درخواستوں کی سماعت آج12اگست تک ملتوی کر دی ہے۔

بلاتعطل فراہمی

مزید : صفحہ آخر