غداری کیس,سماعت ملتوی یا کراچی منتقل کی جائے : بیرسٹرفروغ نسیم

غداری کیس,سماعت ملتوی یا کراچی منتقل کی جائے : بیرسٹرفروغ نسیم
غداری کیس,سماعت ملتوی یا کراچی منتقل کی جائے : بیرسٹرفروغ نسیم

  

 اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک )سابق صدر پرویز مشرف کے خلاف غداری کیس کی سماعت کے دوران بیرسٹر فروغ نسیم نے عدالت سے سماعت ملتوی یا کراچی منتقل کر نے کی استدعا کر دی ۔ تفصیلات کے مطابق جسٹس فیصل عرب کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے سابق صدر پر ویز مشرف کے خلاف غداری کیس کی سماعت کی ۔ سماعت کے دوران سابق صدر کے وکیل بیرسٹر فروغ نسیم نے کہا کہ اسلام آباد کے حالات کے سبب ان کے اہل خانہ پریشان ہیں اور انہیں کراچی واپس آنے پر زور دے رہے ہیں،عدالت سے استدعا ہے کہ سماعت ملتوی یا کراچی منتقل کی جائے ۔اس موقع پر پراسیکیوٹر اکرم شیخ نے کہا کہ ان کے اہلخانہ بھی پریشان ہیں لیکن وہ پرواہ نہیں کرتے، فروغ نسیم کیلئے ان کا گھر حاضر ہے، مقدمہ یہاں تک لانے کیلئے انہیں پل صراط پر سے گزرنا پڑا، جن حالات کا سامنا کرنا پڑا وہ خدا جانتا ہے۔ریکارڈ تحویل میں لینے سے متعلق پرویز مشرف کی درخواست پر فروغ نسیم نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ غداری کا جرم ایف آئی اے ایکٹ اور رولز کے شیڈول میں شامل ہے لیکن پرویز مشرف کے معاملے میں یہ طریقہ کار نہیں اپنایا گیا ہے اور اس بنیاد پر تحقیقاتی رپورٹ مسترد ہو سکتی ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ رپورٹس تفتیشی ریکارڈ کا حصہ نہیں ہیں ، عدالت یہ رپورٹس طلب کرکے نقول فراہم کرے، حکومت سقم دور کرنے کیلئے کیس ڈائریز میں ردو بدل کر رہی ہے اور اسی لئے یہ ڈائریز عدالت میں پیش کرنے سے گریز کیا جا رہا ہے، عدالت سے استدعا ہے کہ فوری طور پر یہ ریکارڈ اپنی تحویل میں لے، حسین اصغر کے اختلافی نوٹ کے باعث حکومت انہیں بطور گواہ پیش نہیں کر رہی۔اس سے پہلے جب سماعت شروع ہوئی تو سابق صدر پرویز مشرف کے وکیل شوکت حیات کی عدم موجودگی کے سبب تفتیشی ٹیم کے رکن ڈائریکٹر ایف آئی اے مقصود الحسن پر جرح ملتوی کرنا پڑی تھی ۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں