اوکاڑہ:22برس میں 98پولیس افسر آئے اور گئے ،مقتول کی بیوہ انصاف کی منتظر

اوکاڑہ:22برس میں 98پولیس افسر آئے اور گئے ،مقتول کی بیوہ انصاف کی منتظر

لاہور(اپنے کرائم رپورٹرسے )تھانہ حویلی لکھا کے علاقہ میں 22سا ل قبل قتل ہونے والے 24سالہ اسلم کے قاتلوں کو سزا نہ مل سکی ،مقتول کی بیوہ 22سال سے انصاف کے حصول کے لئے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ،متاثرہ خاتون نے گزشتہ روزلاہور پریس کلب کے باہر بھی احتجاجی مظاہرہ کیا،واضح رہے کہ اوکاڑہ میں 11ایس پیز 9ڈی پی اوز 78تفتیشی افسر بدل گئے ہیں لیکن اسے تاحال انصاف نہیں مل سکا ہے ۔تفصیلات کے مطابق مقتول اسلم کی بیوہ کلثوم کے مطابق حویلی لکھا میں 40سے زیادہ مقدمات میں مطلوب طاہر اور امداد نے 1995ء میں اسلم کو قتل کردیا تھا،متاثرہ خاتون نے الزام عائد کیا ہے کہ 7ستمبر 2000ء کو مقدمہ کی مثل اے آئی جی لاہور کو پیش کی گئی جس کے بعد مثل تھانے واپس نہیں پہنچ سکی اور مبینہ طورغائب کروا دی گئی ہے اور تاحال ملزمان گرفتار نہیں ہوسکے اور نہ ہی چالان عدالت میں پیش کیا گیا جبکہ ملزمان نہ صرف آزاد پھر رہے ہیں بلکہ قتل کی دھمکیاں دے رہے ہیں اور میں اپنے بچوں کے ہمراہ چھپتی پھر رہی ہوں ،کلثوم نے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف ،آئی جی پنجاب اور چیف جسٹس سے اپیل کی ہے کہ مجھے اور میرے اہل خانہ کو تحفظ اور انصاف فراہم کیا جائے اور حویلی لکھا پولیس کو جلد ازجلد مثل عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیا جائے ورنہ میرے پاس اپنے بچوں سمیت خود کشی کے سوا کوئی دوسرا حل نہیں ہے ۔

مزید : علاقائی


loading...