ٹبہ سلطان پور، ہسپتال میں مبینہ کرپشن، تحقیقاتی رپورٹ ”دفن“کرنیکا خدشہ

   ٹبہ سلطان پور، ہسپتال میں مبینہ کرپشن، تحقیقاتی رپورٹ ”دفن“کرنیکا خدشہ

  

    ٹبہ سلطان پور (نمائندہ پاکستان) ہسپتال ٹبہ سلطان پورمیں بوگس بل بنا کر قومی خزانہ سے ایک کروڑ20لاکھ روپے نکلوانے کے معاملہ ردی کی ٹوکری کی نظر ہونے کے خدشات بڑھنے لگے اور شہریوں کی جانب سے خدشہ ظاہر کیا گیا ہے تحقیقاتی رپورٹ جاری کرنے میں جان بوجھ کر تاخیر کی جارہی ہے اور خدشہ ہے کہ انکوائری رپورٹ ہسپتال کی انچار ج لیڈی ڈاکٹر کے حق میں آئے گی جس کے باعث شہریوں نے کاروائی کے لئے نیب اور انٹی کرپشن احکام کو (بقیہ نمبر38صفحہ10پر)

درخواستیں ارسال کردی ہیں درخواستوں میں ہسپتال میں بوگس بل بنا کر قومی خزانہ سے رقم نکلوانے اور ہسپتال میں جن مہینوں کے دوران بوگس بل بنائے گئے اُس دوران خریدے گئے تمام سامان اور میڈیشن کا ریکارڈ بھی پیش کیا گیا ہے ذرائع کے مطابق ہسپتال میں تین محکموں مختلف محکموں کے بل بنا کر قومی خزانہ سے رقم نکلوائی گئی ہے ہسپتال میں اتنا بڑا کرپشن کا سکنڈل سامنے آنے کے باوجود ڈپٹی کمشنر وہاڑی نے مسلسل خاموشی اختیار کررکھی ہے اور سیاست دانوں کے آگے بے بس ہوچکے ہیں ڈپٹی کمشنر وہاڑی نے خود آج تک ہسپتال میں آکر صورتحال کا جائزہ تک نہیں ہسپتال کو لاوارثوں کی طرح چھوڑ دیا ہے جس کے باعث ہسپتال کا ماحول بڑی طرح متاثرہ ہورہا ہے علاقہ کی مختلف تنظیموں کے افراد نے شدید احتجاج کرتے ہوئے نیب، انٹی کرپشن حکام اور صوبائی وزیر صحت سے فوری طور پر نوٹس لیتے ہوئے کرپشن کر نے میں ملوث ہسپتال ٹبہ سلطان پور کے عملہ کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لانے کا مطالبہ کیا ہے۔

خدشہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -