اسلام آبادہائیکورٹ ،ملک کی عدالتوں سے جعلسازی سے ریلیف لینے والے ملزم کااعتراف 

اسلام آبادہائیکورٹ ،ملک کی عدالتوں سے جعلسازی سے ریلیف لینے والے ملزم ...
اسلام آبادہائیکورٹ ،ملک کی عدالتوں سے جعلسازی سے ریلیف لینے والے ملزم کااعتراف 

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسلام آبادہائیکورٹ میں ملک کی عدالتوں سے جعلسازی سے ریلیف لینے والے ملزم نے اعتراف کرلیا،عدالت نے ملزم کاریکارڈ پشاور اور سندھ ہائیکورٹ رجسٹرار آفس بھجوانے کی ہدایت کردی اورملزم کو انچارج مارگلہ پولیس سٹیشن کے سامنے روزانہ حاضری کاحکم دیدیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ملک کی عدالتوں سے جعلسازی سے ریلیف لینے والے ملزم کیخلاف کیس کی سماعت ہوئی،اسلام آبادہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کیس کی سماعت کی۔

ملزم نے پشاور ہائیکورٹ اور سندھ ہائیکورٹ سے جعلسازی کااعتراف کرلیا،عدالت نے رجسٹرار کو پشاوراورسندھ ہائیکورٹ رجسٹرارآفس کو ریکارڈبھجوانے کی ہدایت کردی۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ ملزم عدالت کیساتھ جعلسازی ،توہین عدالت اوردیگر جرائم کا مرتکب ہوا،ملزم نے ضمانت مستردہونے کاذکر کئے بغیر پشاورسندھ ہائیکورٹ سے حفاظتی ضمانت کرائی ،عدالت کو مس لیڈ کرنے کے جرم میں کیادفعات لگیں گی ،ایس پی آئندہ سماعت پر رپورٹ دیں ۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ملزم کے وکیل پر اظہار برہمی کرتے ہوئے کہاکہ کیایہ طریقہ ہے کہ لوگ قانون کاکھلواڑ کریں،چیف جسٹس نے ملزم کے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہاکہ کیوں نہ آپ کاکیس متعلقہ بار کونسل کو بھیج دوں ،آپ کی بڑی ذمہ داری ہے آپ کو کلائنٹ کاکنڈکٹ دیکھ کر کیس لیناچاہئے ،کیاآپ نے ان عدالتوں کے رجسٹرار کو لکھاجواس ملزم نے ان کے ساتھ کیا،اس ملک کاسسٹم اس طرح نہیں چل سکتایہ کوئی مذاق تھوڑا ہے ۔

عدالت نے ملزم پر اظہار برہمی کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے جھوٹ بولا ہے عدالتوں کومس لیڈکیاہے،ملک کے جوڈیشل سسٹم کو نیچا دکھانے کی کوشش کی گئی ۔

عدالت نے ملزم کو انچارج مارگلہ پولیس سٹیشن کے سامنے روزانہ حاضری کاحکم دیتے ہوئے کیس کی سماعت 17 اگست تک ملتوی کردی ۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -