تاج پورہ ، کچی آبادی میں بانسوں پر بجلی کی لٹکتی تاروں حادثے کا خدشہ

تاج پورہ ، کچی آبادی میں بانسوں پر بجلی کی لٹکتی تاروں حادثے کا خدشہ

 لاہور(لیاقت کھرل) تاج پورہ برف خانہ روڈ پر واقع کچی آبادی میں بجلی کی لٹکتی تاریں ، بے ہنگم پن کا منظر اور جانی حادثات کا موجب جبکہ آبادی کے ساتھ محکمہ اوقاف کے خالی پلاٹوں میں کئی سالوں سے کھڑا گندا پانی اور جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر بیماریاں پھیلانے لگے۔ ’’پاکستان‘‘ کے سروئے میں علاقہ کے مکین محکمہ اوقاف، لیسکو ، سٹی گورنمنٹ ، سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اور واسا حکام سمیت منتخب نمائندوں کی چشم پوشی کے خلاف پھٹ پڑے۔ اس موقع پر تاج پورہ کی کچی آبادی کے مکینوں اصغر گلو اور سلیم اکبر، شبیر عباسی سمیت بابا بوٹا نے بتایا کہ اس آبادی میں لیسکو حکام نے گزشتہ کئی سالوں سے بجلی کے پول نہیں لگائے ہیں۔ بانس کھڑے کر کے انہی بجلی کے کنکشن دئیے گئے ہیں جس میں آندھی اور طوفان آنے پر بانس گر پڑتے ہیں، جس کے باعث کئی کئی روز تک اندھیروں میں زندگی گزارنا پڑتی ہے، جس کے ساتھ پانی بھی نہیں آتا اور زندگی جام ہو کر رہ جاتی ہے۔ اس موقع پر سرفراز احمد، آصف علی، ساد علی، نذیر حسین، غلام نبی، عرفان علی ملک اور سلیم اختر نے بتایا کہ گلی محلوں میں بجلی کی ٹوٹی پھوٹی اور بوسیدہ لٹکتی تاریں بے ہنگم پن کا منظر پیش کر رہی ہیں اور بارش آتے ہی ٹوٹی پھوٹی بوسیدہ اور لٹکتی ہوئی تاروں میں کرنٹ آ جاتا ہے، جس سے متعدد افراد اور جانور کرنٹ کی زد میں آ چکے ہیں اور یہ ٹوٹی پھوٹی ، بوسیدہ اور لٹکتی ہوئی بجلی کی تاریں جانی حادثات کا موجب بن رہی ہی اور اس بارے ایکسیئن مغل پورہ لیسکو اور تاج پورہ سب ڈویژن کے ایس ڈی او کو متعدد بار شکایات کر چکے ہیں۔ علاقہ کے ایم این اے اور ایم پی اے کو بھی تحریری طور پر درخواستیں دے چکے ہیں، لیکن لیسکو کے ذمہ دار نمائندوں سمیت منتخب نمائندے ٹس سے مس نہ ہیں جس کے باعث بجلی کی لٹکتی ہوئی تاروں نے علاقہ میں خوف و ہراس پھیلا رکھا ہے۔ اس موقع پر اصغر گلو، سلیم اختر اور بابا بوٹا نے مزید کہا کہ چیف ایگزیکٹو لیسکو کو نوٹس لے کر ان کی آبادی میں جان لیوا تاروں سے چھٹکارا دلوائیں۔ اس موقع پر مکینوں احسن ناز، راجہ شاہد، امجد علی چیمہ ، محمد غفار احمد نے بتایا کہ آبادی کے ساتھ محکمہ اوقاف کے خالی پلاٹ ہیں جن میں کئی سالوں سے گندا پانی کھڑا ہے۔ بارش ہونے پر پانی سے تعفن اور بدبو پھیل جاتی ہے اور اس کے ساتھ گندگی کے ڈھیروں نے صحت و صفائی کی صورتحال نے بیماریوں کو جنم دے رکھا ہے جس کے باعث متعدد امراض پیدا ہو رہی ہیں اور آئے روز بچے اور بوڑھے افراد موسمی بیماریوں کے ساتھ گندے پانی اور گندگی کے ڈھیروں سے ڈینگی مچھر جیسی جان لیوا بیماری میں مبتلا ہو رہے ہیں اور اس بارے ڈی سی او لاہور ، ٹاؤن انتظامیہ، واسا حکام اور محکمہ اوقاف کو متعدد بار شکایتیں کر چکے ہیں ، اس کے باوجود تمام محکمے ذمہ داری لینے پر تیار نہ ہیں۔ اس موقع پر غلام نبی اور ساجد علی ، سرفراز احمد اور شبیر عباسی نے مزید بتایا کہ آبادی کے مکینوں کی شکایت پر کمشنر لاہور نے دو سال قبل دورہ کیا اور کمشنر لاہور نے ڈی سی او لاہور اور پی ایچ اے حکام سمیت محکمہ اوقاف کے افسران کو ان خالی پلاٹوں میں پارک تعمیر کرنے کا حکم دیا اور کمشنر نے پارک کاافتتاح بھی کر دیا جس کے بعد کمشنراور ڈی سی او کے حکم پر پر پارک کے لئے اینٹیں بھی منگوائی گئیں ، اس کے باوجود پلاٹوں سے نہ تو گندا پانی نکالا گیا اور نہ ہی گندگی کے ڈھیر ختم کئے گئے ہیں۔ اس صورتحال میں محکمہ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اور واسا حکام نے بھی چشم پوشی سے کام لے رکھا ہے۔ اس موقع پر مکینوں نے وزیر پانی و بجلی اور چیف ایگزیکٹو لیسکو سے بجلی کے نئے پول لگانے کا مطالبہ کیا تاکہ جانی حادثات کا موجب بننے والی بجلی کی لٹکتی ہوئی تاروں سے چھٹکارا مل سکے، جبکہ کمشنر لاہور اور ڈی سی او سمیت محکمہ اوقاف کے حکام سے محکمہ اوقاف کے خالی پلاٹوں میں پارک تعمیر کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1