18ویں ترمیم کے بعدٹرسٹ ہسپتالوں کی صوبوں کومنتقلی کامعاملہ ،سپریم کورٹ نے حکومت کو 6 ہفتے کی مہلت دیدی

18ویں ترمیم کے بعدٹرسٹ ہسپتالوں کی صوبوں کومنتقلی کامعاملہ ،سپریم کورٹ نے ...
18ویں ترمیم کے بعدٹرسٹ ہسپتالوں کی صوبوں کومنتقلی کامعاملہ ،سپریم کورٹ نے حکومت کو 6 ہفتے کی مہلت دیدی

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے 18 ویںترمیم کے بعد ٹرسٹ ہسپتالوں کی صوبوں کی منتقلی فیصلے کیخلاف درخواستوں پروفاقی حکومت کو6 ہفتے کی مہلت دیدی،عدالت نے کہا ہے کہ 6 ہفتے میں حکومت ہسپتالوں سے متعلق پلان پیش کرے،حتمی فیصلے تک ہسپتالوں کوفنڈزدےکرفنکشنل رکھاجائے، وفاق اورصوبے تفصیلی رپورٹ جمع کرائیں۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں 18 ویںترمیم کے بعد ٹرسٹ ہسپتالوں کی صوبوں کی منتقلی فیصلے کیخلاف درخواستوں پر سماعت ہوئی ،جسٹس عمرعطابندیال کی سربراہی میں 5رکنی لارجربنچ نے سماعت کی ،جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ تمام ہسپتال ہمارااثاثہ ہیں،جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ اٹارنی جنرل کوحکومتی موقف پیش کرنے کاکہاتھا،ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ وفاقی حکومت پانچوں ہسپتال صوبوں کوواپس کرناچاہتی ہے،سپریم کورٹ فیصلے کے باعث عملدرآمد نہیں ہوپارہا،جسٹس مقبول باقر نے کہاکہ حکومت صرف 5 نہیں،تمام ٹرسٹ ہسپتالوں کودیکھے۔

درخواست گزارڈاکٹرز نے کہا کہ تنخواہیں مل رہی ہیں نہ ہی پنشن،وکیل پنجاب حکومت نے کہا کہ شیخ زیدہسپتال کوفنڈزفراہم کردیئے،وفاقی سیکرٹری نے کہا کہ سندھ کے ہسپتالوں کوبھی فنڈز،مراعات دیں گے،فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ سندھ حکومت کووفاق کوئی فنڈنہیں دے رہی۔

جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ تمام مسائل کوباریک بینی سے دیکھیں گے،عدالت نے کہاکہ سندھ حکومت اوروفاق نے مزیدوقت مانگا ہے، وفاقی سیکرٹری ہیلتھ نے معاملات حل کرانےکی یقین دہانی کرائی،عدالت نے کہا کہ 6 ہفتے میں حکومت ہسپتالوں سے متعلق پلان پیش کرے،حتمی فیصلے تک ہسپتالوں کوفنڈزدےکرفنکشنل رکھاجائے،وفاق اورصوبے تفصیلی رپورٹ جمع کرائیں،عدالت نے سماعت مارچ کے پہلے ہفتے تک ملتوی کردی۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد