فیاض الحسن چوہان کی جانب سے الزام کے بعد لیگی کارکن بھی میدان میں آگیا ،آرمی چیف سے اپیل کردی

فیاض الحسن چوہان کی جانب سے الزام کے بعد لیگی کارکن بھی میدان میں آگیا ،آرمی ...
فیاض الحسن چوہان کی جانب سے الزام کے بعد لیگی کارکن بھی میدان میں آگیا ،آرمی چیف سے اپیل کردی

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )مسلم لیگ ن کے کارکن نے کہا ہے کہ وزیراطلاعات پنجاب فیاض الحسن چوہان نے پی آئی سی واقعے میں مجھ پر الزام عائد کرکے میری اور میرے اہل خانہ کی زندگیوں کو خطرے میں ڈال دیا۔فیاض الحسن چوہان کے بیان پر رد عمل دیتے ہوئے لیگی کارکن فیصل نقوی نے کہا ہے کہ ان کا تعلق مسلم لیگ (ن) سے ہے اور وہ ایک تاجر ہیں۔انہوں نے فیاض الحسن چوہان پر حملہ کرنے میں اپنے آپ کے ملوث ہونے کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ میرا گذشتہ روز کے واقعے میں کوئی کردار نہیں ہے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یہ وکلا اور ڈاکٹروں کے درمیان کا معاملہ ہے۔لیگی کارکن نے کہا کہ پنجاب کے وزیر صحت نے خود پر حملے کا الزام مجھ پر عائد کرکے میری اور میرے اہل خانہ کی زندگیوں کو خطرے میں ڈال دیا ہے،میں چیف جسٹس اور آرمی چیف سے اپیل کرتا ہوں کہ اگر میرے اہل خانہ کو کچھ ہوا تو ذمہ دار عمران خان ،عثمان بزدار اور فیاض الحسن چوہان ہونگے ۔

واضح رہے کہ پی آئی سی میں وکلاکی غنڈہ گردی نے ہسپتال کو میدانِ جنگ بنا دیاتھا۔مشتعل وکلا نے وزیرِ اطلاعات پنجاب فیاض چوہان پر بھی تشدد کیا اور انہیں بالوں سے پکڑ لیا۔بعد ازاں اپنے ایک بیان میں فیاض الحسن چوہان نے کہا تھا کہ ملک دشمن طاقتوں نے واقعے کوسانحہ ماڈل ٹاون جیسی صورتحال بنانے کی کوشش کی۔انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا نے ان عناصر کو بے نقاب کیا جن کا تعلق بیگم صفدر اعوان اور حمزہ شہباز سے ہے، بزدار حکومت نے صورتحال کو مزید خراب ہونے سے بچا لیا۔

مزید : قومی