معروف شاعر، براڈکاسٹر ناز خیالوی کا یومِ وفات(12دسمبر)

معروف شاعر، براڈکاسٹر ناز خیالوی کا یومِ وفات(12دسمبر)
معروف شاعر، براڈکاسٹر ناز خیالوی کا یومِ وفات(12دسمبر)

  

ناز خیالوی

ناز خیالوی کے نام سے شہرت پانے والے اس منفرد شاعر کا اصل نام محمد صدیق تھا۔ انہوں نے فیصل آباد کی تحصیل تاندلیانوالہ کے گاؤں”خیالی دی جھوک” میں 7 مئی 1937ء میں آنکھ کھولی۔ اسی وجہ سے اپنے تخلص ناز اور چک خیالی سے تعلق کی مناسبت سے ناز خیالوی کہلائے۔ شاعر کا ملکہ انہیں فطرت کی طرف سے ودیعت ہوا تھا۔ اسیِ فطری عطا کی وجہ سے ان کی موزدنیٔ طبع کے جوہر بہت جلد کھلنا شروع ہوگئے۔ احسان دانش, شورش کاشمیری اور ساغر صدیقی کی مسلسل محبتوں سے بھی فیض یات ہوتے رہے۔ چھوٹی موٹی ملازمتیں بھی کیں۔ ریڈیو پاکستان، فیصل آباد ایف ایم۔93 کے معروف پروگرام ”ساندل دھرتی” کی قریباً ربع صدی اور ”دبستان” کی میزبانی کرتے رہے۔ دریا دل اور یار باش انسان تھے محفلوں میں ان کی زندہ دلی اور بذلہ  سنجی کا جادو سر چڑھ کر بولتا تھا۔

ناز خیالوی کی زندگی میں کافیوں پر مشتمل صرف ایک ہی پنجابی کلام کا مجموعہ” سائیاں وے” کے نام سے 2009ء میں منظرِ عام پر آیا۔ ان کی وفات کے بعد ضخیم اُردو مجموعۂ کلام ”تم اک گورکھ دھندہ ہو” زیورِ طباعت سے آراستہ ہوچکا ہے، جس میں بیشتر اردو کلام اکھٹا ہوگیا ہے۔ 

 12 دسمبر 2010ء کو خالقِ حقیقی سے جاملے اور تاندلیانوالہ کے ہی ”بڑے قبرستان”کے نام سے مشہور قبرستان میں مدفون ہوئے۔

کبھی یہاں تمہیں ڈھونڈا کبھی وہاں پہنچا

تمہاری دید کی خاطر کہاں کہاں پہنچا

غریب مٹ گئے ، پامال ہو گئے لیکن

کسی تلک نہ تیرا آج تک نشاں پہنچا

ہو بھی نہیں اور ہر جا ہو

تم اک گورکھ دھندہ ہو

تم اک گورکھ دھندہ ہو

ہر ذرے میں کس شان سے تو جلوہ نما ہے

حیراں ہے مگر عقل میں کیسا ہے تو کیا ہے

تجھے دیر و حرم میں میں نے ڈھونڈا تو نہیں ملتا

مگر تشریف فرما تجھ کو اپنے دل میں دیکھا ہے

جب بجز تیرے کوئی دوسرا موجود نہیں

پھر سمجھ میں نہیں آتا تیرا پردہ کرنا

تم اک گورکھ دھندہ ہو

کوئی صف میں تمہاری کھو گیا ہے

اسی کھوئے ہوئے کو کچھ ملا ہے

نہ بت خانے نہ کعبے میں ملا ہے

مگر ٹوٹے ہوئے دل میں ملا ہے

عدم بن کر کہیں تو چھپ گیا ہے

کہیں تو ہست بن کر آ گیا ہے

نہیں ہے تو تو پھر انکار کیسا

نفی بھی تیرے ہونے کا پتہ ہے

میں جس کو کہہ رہا ہوں اپنی ہستی

اگر وہ تو نہیں تو اور کیا ہے

نہیں آیا خیالوں میں اگر تو

تو پھر میں کیسے سمجھا تو خدا ہے

تم اک گورکھ دھندہ ہو

شاعر: ناز خیالوی

Kabhi   Yahan   Tumhen   Dhoonda   Kabhi   Wahan   Pahuncha

Tumhaari   Deed   Ki Khaatir   Kahan   Kahan   Pahuncha 

Ghareeb   Mit   Gaey   ,   Pamaal   Ho   Gaey   Lekin

Kisi   Talak   Na   Tera   Aaj   Tak   Nishaan   Pahuncha

Ho   Bhi   Nahen   Aor   Har   Ja   Ho

Tum   Ik   Gorakh   Dhanda   Ho

Tum   Ik   Gorakh   Dhanda   Ho

Har   Zarray   Men   Kiss   Shaan   Say   Tu   Jalwa   Numa   Hay

Hairaan   Hay   Magar   Aql   Men   Kaisa   Hay  Tu   Kaya   Hay

Tujhay   Dair-o-Haram   Men   Main   Nay   Dhoonda   Tu   Nahen   Milta

Magar   Tashreef   Farma   Tujh   Ko   Apnay   Dil   Men   Daikha   Hay

Jab   Bajuz   Teray   Koi   Doosra   Nahen   Maojood

Phir   Samjh   Nahen   Aata   Tera   Parda   Karna

Tum   Ik   Gorakh   Dhanda   Ho

 Koi   Saf   Men   Tumhaari   Kho   Gaya   Hay

Isi   Khoay   Huay   Ko   Kuchh   Mila   Hay

Na   But   Khaanay   Men   Na   Kaabay  Men   Mila   Hay

Magar   Tootay   Huay   Dil   Men   Mila   Hay

Adam   Ban   Kar   Kahen   Tu   Chupp   Gaya   Hay

Kahen   Tu   Hast   Ban   Aa   Gaya   Hay

Nahen    Hay   Tu   To   Phir   Inkaar   Kaisa

Nafi   Bhi   Teray    Honay   Ka    Pata   Hay

Main  Jiss   Ko   Keh   Raha   Hun   Apni   Hasti

Agar   Wo   Nahen   To   Aor   Kaya   Hay

Nahen   Aaya   Khayaalon   Men   Agar   Tu

To   Phir   Main   Kaisay   Samjha   Tu   Khuda   Hay

Tum   Ik   Gorakh   Dhanda   Ho

Poet: Naz    Khayalvi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -