قانون تحفظ ناموس رسالت کیخلاف سازشوں کو ناکام بنایا جائے ، ختم نبوت رابطہ کمیٹی

قانون تحفظ ناموس رسالت کیخلاف سازشوں کو ناکام بنایا جائے ، ختم نبوت رابطہ ...

  



 لاہور(نمائندہ پاکستان)ختم نبوت رابطہ کمیٹی اقبال ٹاؤن لاہور کا اجلاس گزشتہ روز جامع مسجد مکی میں مولانا محمدغازی کی صدارت میں ہوا۔اجلا س میں عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت لاہور کے مبلغ مولانا عبدالنعیم،ضلعی ناظم تبلیغ مولانا قاری عبدالعزیز ، جمعیۃ علماء اسلام لاہور کے ضلعی ترجمان مولاناحافظ غضنفرعزیز ، مولانا قاضی عبدالودود،مفتی محمدعمر،مقامی کونسلر حافظ معاویہ محمود ،مولانا عبدالرحمن ،قاری دوست محمد، مولانا خالدتارڑ،موولانا عبدالمالک حیات ،مولانا تقی الدین ،قاری محمدطیب مدنی ،قاری سلمان ،قاری محمد یاسین ،مولانا ریاض ،قاری محی الدین سمیت کئی علماء نے شرکت کی ۔اجلاس میں علاقہ بھر میں تین بڑے پروگرا م منعقد کیے جائینگے اور 9مارچ کو ختم نبوت موٹر سائیکل ریلی نکالی جائیگی۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا عبدالنعیم نے کہاکہ انگریز کا خود کاشتہ پودا فتنہ قادیانیت ملک کے مختلف علاقوں میں سادہ لوح مسلمانوں کو قادیانی کافر و مرتد بنانے کیلئے اپنے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کیے ہوئے ہیں جنکا تدارک کرنا حکومت کی آئینی و دینی ذمہ داری ہے۔ سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے ہیومن رائٹس کے اجلاس میں جمعیۃ علماء اسلام کے سینیٹر مفتی عبدالستار کوتحفظ ناموس رسالت قانون کے حق میں جرأت مندانہ موقف پیش کرنے پر مبارکباد پیش کرتے ہیں۔علماء نے کہا کہ آئین پاکستان میں توہین رسالت کے مرتکب کی سزا متعین ہے قانون میں تبدیلی تو درکنار اس تبدیلی کا سوچھا بھی گیا امت مسلمہ اسکو کبھی بھی برداشت نہیں کرے گی قانون تحفظ ناموس رسالت کیخلاف بیرونی دباؤ اوراندرونی سازشوں کو ناکام بنایا جائے ۔اجلاس میں ختم نبوت کانفرنس کی بادشاہی مسجد کی تیاری کے سلسلے میں علاقہ میں دروس ختم نبوت دینے اورتشہیری مہم کومزیدفعال کر کے لیے پینافلکس اور اشتہارات شائع کرنیکا بھی اعلان کیا گیا۔علماء نے کہا کہ موجودہ دور میں ختم نبوت کی کانفرنس کی اہمیت بڑھ گئی ہے کیونکہ ختم نبوت کے قوانین ،تحفظ نامو س رسالت قانون کیخلاف اندرونی اور بیرونی طورپرسازشیں عروج پرہیں ان تما م سازشوں بے نقاب کرنا اتہائی اہم ہے اوریہ پوری امت کے اتحادو اتفاق سے ممکن ہے اورمجلس تحفظ ختم نبوت اتحاد امت کا پلیٹ فارم ہے ،بادشاہی مسجد کانفرنس پوری ملت اسلامیہ کی طرف سے ایک نمائندہ کانفرنس ہوگی جس سے اسلام دشمن قوتوں کو مشترکہ طورپر تحفظ ختم نبوت اور نامو س رسالت تحفظ کے لیے پیغام دیا جائے گااوریہ کانفرنس اتحاد امت کا عملی نمونہ ہوگی۔علماء نے آزادکشمیر دستورسازاسمبلی میں عقیدہ ختم نبوت کے تحفظ اور قادیانیوں کو آئینی قانونی طورپر غیرمسلم اقلیت قراردینے کے فیصلے کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم وزیراعظم آزادکشمیرانکی پوری کابینہ اور اپوزیشن اور انکے تمام افراد کو اس تاریخ ساز فیصلے پر مبارکباد پیش کرتے ہیں جنہوں نے اس اہم دینی فریضے کو سرانجام دے کر آزادکشمیر کے مسلمانوں اور اس کشمیر دھرتی کو قادیانیوں کی سازشوں سے پاک کردیاپوری دنیا کے مسلمان آزادکشمیر کی حکومت کے اس تاریخ ساز فیصلے پر خوشی اور مسرت کا اظہار کر رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ آزادکشمیراسمبلی ،تمام سیاسی ،مذہبی جماعتوں کے رہنمااور آئینی ماہرین جو اہم کردار دا کیا اس پرہم ان کو ہدیہ تبریک پیش کرتے ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1