صوبائی دارالحکومت ، قاتل کھیل نے زور پکڑ لیا ،35تھانوں کی حدود میں پتنگ بازی ہوتی رہی ، شہری سراپا احتجاج

صوبائی دارالحکومت ، قاتل کھیل نے زور پکڑ لیا ،35تھانوں کی حدود میں پتنگ بازی ...

  



 لاہور(خبر نگار)بسنت قریب آتے ہی پتنگ بازی کے قاتل کھیل نے زور پکڑ لیا ہے،گزشتہ روز شہر کے 35 تھانوں کی حدود میں پتنگ بازی کی گئی جس میں کیمیکل سے تیار کردہ ڈور کا بھی استعمال کیا گیا ، شہری دن بھر سراپا احتجاج رہے ۔ تفصیلات کے مطابق بسنت منانے کے حوالے سے جاری تیاریوں کے ساتھ پتنگ بازی جیسے قاتل کھیل کے سلسلہ نے زور پکڑ لیا ہے، گزشتہ روز لاہو رکے 35تھانوں کی حدود میں دن بھر۔’’ بو کاٹے‘‘ کے نعرے لگتے رہے، اس موقع پر پتنگ بازوں نے بڑے بڑے سائزکی پتنگوں اور کیمیکل سے تیار کردہ ڈور کا بھی استعمال کیا ۔ پتنگ بازوں اور پولیس کی دن بھر اور شام تک آنکھ مچولی کا سلسلہ جاری رہا۔ پولیس اصل پتنگ بازوں کو گرفتار کرنے کی بجائے چھت کے مالک اور پتنگ باز کے والد اور بھائیوں کو پکڑتی رہی۔ گزشتہ روز جن علاقوں میں سب سے زیادہ پتنگ بازی کی گئی ان میں گنجان آبادیوں کے ساتھ پوش علاقے بھی شامل ہیں جن میں گرین ٹاؤن، ٹاؤن شپ ، ہنجر وال ، سبزہ زار ، کاہنہ ، کوٹ لکھپت ، لیاقت آباد، غالب مارکیٹ ،اچھرہ، وحدت کالونی ، ملت پارک ، شیر اکوٹ ، سمن آباد، ساندہ ، گجر پورہ ، قلعہ گجر سنگھ ، شالیمار ، گڑہی شاہو، ٹبی سٹی ،اکبری گیٹ ، لوہاری گیٹ ، شفیق آباد ، راوی روڈ ، ہربنس پورہ، باغبانپور، فیکٹری ایریا ، غازی آباد ، شمالی چھاؤنی ، جنوبی چھاؤنی ، ڈیفنس بی سمیت دیگر علاقوں میں شہری دن بھر چھتوں پر چڑھ کر پتنگ بازی کرتے رہے ۔ دن بھر شہریوں میں خوف و ہراس پھیلا رہااور شہری گھروں میں سہمے رہے۔ پولیس کسی بھی پتنگ باز کو گرفتار نہ کر سکی ۔ واضح رہے کہ سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر) محمد امین وینس اور ڈی آئی جی آپریشن لاہور ڈاکٹر حیدر اشرف کی جانب سے تمام تھانوں کے ایس ایچ اوز کو احکامات جاری کئے گئے ہیں کہ پتنگ بازی پر پابندی کو یقینی بنائیں مگر ایسا ممکن نہ ہو سکا ۔

مزید : علاقائی