عاصمہ جہانگیرکا انتقال انسانی حقوق،قانون،وکلا کیلئے سب سے بڑا نقصان

عاصمہ جہانگیرکا انتقال انسانی حقوق،قانون،وکلا کیلئے سب سے بڑا نقصان

  



لاہور(آئی این پی) جسٹس (ر) ناصرہ جاویداقبال نے عاصمہ جہانگیر کے انتقال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عاصمہ جہانگیر کا انتقال پاکستان کی خواتین کیلئے بہت بڑا نقصان ہے انہوں نے ساری زندگی خواتین کے حقوق کیلئے جدوجہد کی ۔ وہ جب وکالت کے شعبے میں آئی تو انہیں مرد وکلا کی جانب سے بہت مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا کیونکہ وہ چاہتے تھے کہ خواتین اس شعبے میں نہ آئیں لیکن انہوں نے اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا اور مردوں کو پیچھے چھوڑ دیا مجھے ان کے انتقال کی خبر یقین نہیں آ رہا ۔ علاوہ ازیں بیرسٹر اعتزازاحسن نے کہا ہے کہ عاصمہ جہانگیر کا انتقال وکلاکمیونٹی کیلئے بہت بڑا دھچکا ہے ‘وہ ایک نڈر اور دلیر خاتون وکیل تھی جنہوں نے انسانی حقوق کیلئے بڑا کام کیاہے ‘ عاصمہ جہانگیر پانی کے دھارے کیخلاف چلنے والی خاتون ہے ان کا انتقال ہیومین رائٹس اور قانون کے شعبے کیلئے بہت برا نقصان ہے۔ میاں طاہر جہانگیر اور عاصمہ میں بہت پیار تھااعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ عاصمہ جہانگیر اور میری اہلیہ بشیری میں دوستی تھی ۔دریں اثنا عاصہ جہانگیر پچھلے سال اقوام متحدہ کے ریپورٹیر کی حیثیت سے سری نگر گئی تھیں اور پھر واپس آ کر انہوں نے مقبوضہ کشمیر میں ہونے والی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور کشمیریوں کو اندھا کرنے کے معاملے پر بہت ہی بھرپور موقف اپنایا تھاان کے بھرپور موقف اپنانے کے باعث مقبوضہ کشمیر کے لوگ بھی ان سے بہت محبت کرنے لگے تھے۔ ڈاکٹر بابر اعوان نے عاصمہ جہانگیر کے انتقال پر انتہائی دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ عاصمہ جہانگیر کے انتقال سے عدل کے ادارے کو ان کی کمی لمبے عرصے تک محسوس ہوتی رہے گی۔ پاکستان میں مزاحمتی سیاست کم ہوتی جا رہی ہے اور عاصمہ جہانگیر مزاحمتی سیاست کی بہت بڑی آواز تھیں۔ انہوں نے خود کو عالمی سطح پر منوایا ، عالمی اداروں میں ان کی آواز کو سنا جاتا تھا۔

مزید : صفحہ اول /رائے