اصغر خان کیس ’’ملوث افسروں‘‘ کیخلاف انکوائری مکمل کرنے کا حکم ، سپریم کورٹ نے 2نجی سکولوں کو حکومتی تحویل میں لینے کا حکم دے دیا

اصغر خان کیس ’’ملوث افسروں‘‘ کیخلاف انکوائری مکمل کرنے کا حکم ، سپریم کورٹ ...

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر ،آئی ا ین پی ) سپریم کورٹ نے اصغر خان کیس میں پاک فوج کے ملوث افسران کے خلاف 4 ہفتے میں انکوائری مکمل کرنے کا حکم دیتے ہوئے ہوئے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیدیا ،عدالت نے قرار دیا کہ ایف آئی اے رپورٹ کا جائزہ وزارت دفاع کے جواب کے ساتھ لیا جائے گا،جائزہ لیں گے کہ عدالتی حکم پر عمل ہوا یا نہیں۔تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے اصغر خان کیس کی سماعت کی ، بینچ میں جسٹس فیصل عرب اور جسٹس اعجاز الاحسن شامل تھے ، سابق وفاقی وزیرعابدہ حسین عدالت میں پیش ہوئیں ، عابدہ حسین اصغرخان کیس میں اہم فریق ہیں۔سماعت میں جسٹس گلزار نے کہا ایسامعلوم ہوتا ہے ایف آئی ایہاتھ اٹھاناچاہتی ہے، اٹارنی جنرل بتائیں کورٹ مارشل کی بجائے تفتیش کیوں ہورہی ہے، فوجی افسران کے خلاف وزارت دفاع نے کورٹ ماشل کے لیے کارروائی کیوں شروع نہیں کی؟ جس پر اٹارنی جنرل نے بتایا کورٹ مارشل سے پہلے تفتیش کرناقانونی تقاضاہے۔جسٹس اعجاز نے استفسار کیا ریٹائرمنٹ سے کتنے عرصے بعدتک کورٹ مارشل ہوسکتاہے؟جس پر اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ انکوائری مکمل ہونے کے بعد معاملہ آگے چلے گا، فراڈ ہو یا قومی خزانے کو نقصان پہنچے تو کسی بھی وقت کورٹ مارشل ہوسکتا ہے۔جسٹس اعجاز الاحسن نے اس موقع پر کہا کہ اصغر خان کیس میں 28 سال پہلے 184 کروڑ روپے کی رقم استعمال ہوئی۔بینچ کے سربراہ جسٹس گلزار احمد نے استفسار کیا بانی ایم کیو ایم اور ایم کیو ایم کو بھی پیسے ملے تھے، کیس میں ان کا نام سامنے آیا نا ہی ایف آئی اے رپورٹ میں۔ جسٹس گلزار نے کہا اس میں پبلک منی کاہی معاملہ ہے، ایف آئی اے نے کہا بینکوں میں 28سال سے پہلے کا ریکارڈ موجود نہیں، اسی لئے ہمیں کوئی ثبوت حاصل نہیں ہوپا رہے، ایساہے توبینکوں کے صدورکوبلاکرپوچھتے ہیں کیا معاملہ ہے، اگلہ اقدام دونوں رپورٹس کا مشترکہ جائزہ لیکر کریں گے۔اٹارنی جنرل نے جواب میں کہا کہ ایف آئی اے رپورٹ میں بانی ایم کیو ایم کا نام تھا، وہ پاکستان میں نہیں ہیں اس حوالے سے برطانوی حکومت کے ساتھ بات چیت جاری ہے۔اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ بانی ایم کیو ایم اور چند دیگر ملزمان کی حوالگی کے لیے بات چیت جاری ہے، بہت جلد اہم پیش رفت متوقع ہے۔عدالت نے 4 ہفتے کے اندر پاک فوج کے ملوث افسران کے خلاف انکوائری مکمل کرتے ہوئے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا۔عدالت نے قرار دیا کہ ایف آئی اے رپورٹ کا جائزہ وزارت دفاع کے جواب کے ساتھ لیا جائے گا اور جائزہ لیں گے کہ عدالتی حکم پر عمل ہوا یا نہیں،وقت مانگاگیاہے اسی لئے مزیدسماعت ملتوی کی جاتی ہے۔بعد ازاں سپریم کورٹ میں اصغرخان کیس کی سماعت 4ہفتے کیلئے ملتوی کردی۔

اصغرخان کیس

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر ،آئی این پی ) سپریم کورٹ نے دو نجی سکولوں سے توہین آمیززبان استعمال کرنے پرتحریری جواب طلب کر لیا ،جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ نجی اسکولوں کی انتظامیہ کی آنکھ میں شرم کا ایک قطرہ بھی نہیں، نجی اسکولوں سے بچے کتنی بیماریاں لے کرنکلتے ہیں،حکومت کو نجی اسکول تحویل میں لینے کا حکم دے دیتے ہیں، نجی اسکول والے والدین سے ایسے سوال پوچھتے ہیں جن کا تصور نہیں کرسکتے۔ پیر کو سپریم کورٹ میں پرائیویٹ اسکول فیس کیس کی سماعت ہوئی۔ سماعت کے دوران جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ نجی اسکولوں کی انتظامیہ کی آنکھ میں شرم کا ایک قطرہ بھی نہیں، نجی اسکولوں سے بچے کتنی بیماریاں لے کرنکلتے ہیں۔ جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ نجی اسکولوں نے عدالتی فیصلے پرچیف جسٹس کو خط لکھا، فیصلے میں تضحیک آمیززبان استعمال کی گئی۔وکیل نجی اسکول نے کہا کہ عدالت کی تضحیک کا کوئی ارادہ نہیں تھا، عدالتی فیصلے پرعمل کرکے فیس کم کردی ہے۔ جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ عدالتی فیصلے کے بعد کس قسم کی باتیں کی گئیں، اسکول انڈسٹری ہے یا پیسہ بنانے کا شعبہ ، نجی اسکولوں نے تعلیم کو کاروبار بنا دیا ہے، اسکولوں نے گھروں میں زہرگھول دیا ہے، نجی اسکول والے بچوں کے گھروں میں گھس گئے ہیں، نجی اسکول والے والدین سے ایسے سوال پوچھتے ہیں جن کا تصور نہیں کرسکتے، والدین بچوں کوسیرکرانے کہاں جاتے ہیں یہ پوچھنے والے پرائیویٹ اسکول والے کون ہوتے ہیں، نجی اسکولوں سے کیوں نہ نمٹ لیا جائے، حکومت کونجی اسکول تحویل میں لینے کا حکم دے دیتے ہیں۔عدالت نے اسلام آباد کے دونجی اسکولوں سے توہین آمیززبان استعمال کرنے پرتحریری جواب طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 2 ہفتوں تک ملتوی کردی۔

پرائیویٹ سکول

مزید : صفحہ اول