حکمران وعدوں کو ایفا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکے، ملک پر کنٹرولڈ جمہوریت مسلط ہے: آفتاب شیر پاؤ

حکمران وعدوں کو ایفا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکے، ملک پر کنٹرولڈ جمہوریت ...
حکمران وعدوں کو ایفا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکے، ملک پر کنٹرولڈ جمہوریت مسلط ہے: آفتاب شیر پاؤ

  



پشاور(ڈیلی پاکستان آن لائن) قومی وطن پارٹی کے چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپاؤ نے شفاف اور غیر جانبدارانہ انتخابات کرانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ملک پر کنٹرولڈ جمہوریت مسلط کی گئی ہے،پی ٹی آئی حکومت کی اٹھارہ مہینوں کی کارکردگی پر نظر ڈالنے سے یہ بات عیاں ہے کہ حکمران جماعت اپنی انتخابی وعدوں کو ایفا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکی ہے،موجودہ حکومت کی پالیسیاں ملکی معیشت کیلئے زہر قاتل ہیں۔

سابق گورنر شہید حیات محمد خان شیرپاؤ کی 45ویں برسی کی مناسبت سے منعقدہ ایک بڑے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے آفتاب شیرپاؤ نے کہا کہ  اُن کی جماعت ملک میں حقیقی جمہوریت کا فروغ چاہتی ہے نہ کہ کنٹرولڈ جمہوریت، جس کی وجہ سے جمہوری اداروں کی نشو نما رک گئی ہے، پی ٹی آئی حکومت کی اٹھارہ مہینوں کی کارکردگی پر نظر ڈالنے سے یہ بات عیاں ہے کہ حکمران جماعت اپنی انتخابی وعدوں کو ایفا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکی ہے،ملک اس وقت بد ترین معاشی بحران کا شکار ہے جس کی نظیر نہیں ملتی۔انھوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے گزشتہ اٹھارہ ماہ ملکی قرضوں میں مزیدگیارہ ٹریلین روپے کا اضافہ کیا جو کہ ملک کی قرضوں کا40فیصد بنتا ہے اور فی کس پاکستانی کا قرضہ دو لاکھ تک جا پہنچا، فنانس ڈویژن اور ملک کی معاشی پالیسیاں مکمل طور پر آئی ایم ایف کے رحم کرم پر چھوڑ دی گئی ہیں،مہنگائی اپنی بلند ترین سطح پر ہے،آٹا،گھی،چینی اور دیگر بنیادی ضروریات زندگی کی اشیا میں ہو شر با اضافہ ہوا ہے،گیس اور بجلی کی قیمتوں میں اضافے کے ساتھ ساتھ پٹرولیم مصنوعات اور دوائیوں کی قیمتیں بھی عام آدمی کی پہنچ سے باہر ہو گئی ہے۔

انھوں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کی پالیسیاں دنوں کے حساب سے بدل رہی ہیں،ایک کروڑ نوکریاں پیدا کرنا تو دور کی بات 20لاکھ افراد اب تک بے روزگار ہوگئے ہیں،وفاق کو ایک ایسے طرز پر چلایا جارہا ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ملک میں غیر اعلانیہ سنٹرلائزڈحکومت ہے،جس طریقے سے خیبر پختونخوا اور پنجاب کی حکومتیں چل رہی ہیں اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سب کچھ ریموٹ کنٹرول کے ذریعے مرکز سے چلایا جا رہا ہے،حکومت مشترکہ مفادات کونسل کا اجلاس نہیں بلا سکی جوکہ ایک آئینی تقاضا ہے،ضم شدہ اضلاع کے لوگوں کی توقعات دھرے کی دھرے رہ گئے ہیں اور ایسا لگتا کہ انضمام کے عمل کو ریورس کیا جارہا ہے۔انھوں نے کہا کہ کوئی قوم بھی معاشی ترقی کے بغیر آگے نہیں بڑھ سکتی لیکن موجودہ حکومت کی پالیسیاں ملکی معیشت کیلئے زہر قاتل ہیں،اُنکی جماعت جلد ہی ملک میں جاری مہنگائی اور غلط پالیسیوں کے خلاف ایک تحریک شروع کرے گی۔

مزید : علاقائی /خیبرپختون خواہ /پشاور