پاک،ترکی تعلقات سے کچھ قوتیں پریشان ہیں،اشرفجلالی

پاک،ترکی تعلقات سے کچھ قوتیں پریشان ہیں،اشرفجلالی

  



لاہور (پ ر) تحریک لبیک یا رسول اللہ ؐکے سربراہ ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی نے کہاہے کہ پاکستان اور ترکی کی بڑھتی ہوئی قربت سے کچھ قوتوں کو پریشانی لاحق ہو رہی ہے۔ طیب اردگان کا دورہئ پاکستان حیران کن نتائج دے سکتا ہے۔ طیب اردگان کی طرف سے دوہری شہریت کی تجویز بہت بڑا انقلاب برپا کر سکتی ہے۔ ٹرمپ کی ڈیل آف دی سینچری کے مقابلے میں امت مسلمہ خلافت عثمانیہ کے انتظار میں ہے۔ مسلمانوں کے خلاف یہود و نصاریٰ کی سازشوں کے ادراک اور تدارک کے بغیر امت مسلمہ کے مسائل حل نہیں کیے جا سکتے۔ تین حکومتیں امریکہ، اسرائیل اور بھارت جن کے ہاتھ ہر وقت امت مسلمہ کے خون سے رنگین رہتے ہیں، ان سے بعض عرب حکومتوں کی دوستی سے مسلمانوں کی ایک بڑی اکثریت پر مایوسی چھائی ہوئی ہے۔ ایسی صورت میں ترکی اور طیب اردگان مسلمانوں کی امیدوں کا مرکز بنتے جا رہے ہیں۔ طیب اردگان کی اپنے ملکی مسائل کے حل کے ساتھ ساتھ امت مسلمہ کے مسائل کے حل کے لیے تڑپ نے ان کی شخصیت کو کافی اُجاگر کر دیا ہے۔ان کا تحفظِ حرمین شریفین اور تحفظِ بیت المقدس کو لازم و ملزوم قرار دینا امت مسلمہ کے دل کی آواز ہے۔ امریکہ،بھارت اور اسرائیل کے گٹھ جوڑ نے پوری دنیا کے مسلمانوں کے لیے مسائل کھڑے کر رکھے ہیں۔ سعودی عرب میں دن بدن امریکہ کے بڑھتے اثرات ہرگز نیک شگون نہیں ہیں۔ سعودی عرب ہو یا ایران انہیں کبھی بھی امریکہ سے خیر کی توقع نہیں رکھنی چاہیے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ پاکستان کی پالیسیاں امریکہ کے اثر و نفوذ سے مکمل آزاد ہو جائیں۔ طیب اردگان کی طرف سے پاکستان کے دورے کو زیادہ سے زیادہ مقصد بنانے نے گہری پلاننگ کی ضرورت ہے۔ ان کی آمد اور استقبال کو حکومت یا حکمران جماعت تک محدود نہ رکھا جائے بلکہ عوام پاکستان کو بھی اپنے معزز مہمان کے استقبال کا موقع فراہم کیا جائے اور انہیں عوامی جم غفیر سے براہ راست خطاب کا موقع دیا جائے۔ دونوں ممالک کے باہمی تعلقات سے کشمیر اور بیت المقدس کی آزادی کے امکانات مزید روشن ہو سکتے ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1