قومی اسمبلی، وزیراعظم عوام کو ریلیف دیں یا گھر جائیں، اپوزیشن مہنگائی کیوجہ مشکل فیصلے: حکومت

        قومی اسمبلی، وزیراعظم عوام کو ریلیف دیں یا گھر جائیں، اپوزیشن مہنگائی ...

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) چیئرمین پی پی بلاول بھٹو نے کہا ہے کہ ہمارا مطالبہ خود کشی نہیں، وزیراعظم عمران خان مان لیں کہ وہ نااہل ہیں۔ حکومت عوام کو ریلیف دے یا گھر جائے، معاشی قتل پر خاموش نہیں بیٹھ سکتے۔قومی اسمبلی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وزیراعظم بتائیں ان کی کونسی کرپشن کیوجہ سے مہنگائی بڑھی؟ یہ پارلیمنٹ بے اختیار ہے، ایوان میں مہنگائی پر بحث ہو رہی ہے لیکن مشیر خزانہ ہی موجود نہیں ہیں۔بلاول نے کہا کہ حکومت بینظیر بھٹو انکم سپورٹ فنڈ کو سبوتاژ کر رہی ہے۔ یہ پروگرام پاکستان کا سب سے کامیاب پروگرام ہے لیکن پاکستان کی غریب عوام کو لاوارث چھوڑ دیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ عمران خان کہتے تھے کہ لوگ ٹیکس اس لیے نہیں دیتے کیونکہ وزیراعظم ایماندار نہیں، اب حکومت کا اپنا ادارہ کہہ رہا ہے کہ 7 مہینوں میں 700 ارب کا ٹیکس شارٹ فال ہے۔ کیا اب وزیراعظم ایماندار نہیں یا نااہل؟ اس لیے ٹیکس وصول نہیں ہو رہا؟۔مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما خواجہ آصف نے کہا ہے کہ ان کی جماعت تبدیلی کیلئے کسی سازش کا حصہ نہیں بنے گی۔اسمبلی اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہم انتظار کریں گے کہ موجودہ حکومت کرپشن اور مہنگائی کیوجہ سے رخصت ہو۔ آنیوالے کسی کفیل کے ذریعے اس پارلیمنٹ میں نہ پہنچیں۔خواجہ آصف نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں جو لوگ ایوان میں آئیں وہ دھاندلی کی پیداوار نہ ہوں۔ اگر تبدیلی آتی ہے تو کسی سازش کا حصہ نہیں بنیں گے۔ ہم نہ سازش کریں گے اور نہ ہی ڈیل کریں گے۔ ہم چاہتے ہیں کہ ملکی آئین سربلند ہو۔لیگی رہنما نے کہا کہ میں نے کچھ مہینے پہلے کہا تھا کہ یہ پہلوان خود اپنے بوجھ سے گرے گا۔ وقت بدل رہا ہے، حالات اوورٹیک کر رہے ہیں۔ آج جو میڈیا مہنگائی کے بین ڈال رہا ہے، یہی اس وقت آٹھ آٹھ گھنٹے ان کو دکھاتا تھا۔ تحریک انصاف کو ووٹ دینے والے بھی آج پچھتا رہے ہیں۔ اس وقت عوامی رائے کا فوکس مہنگائی پر ہے۔انہوں نے کہا کہ جب دھرنے کی سیاست شروع ہوئی تو ہم نے پوری چھٹی دی کہ جو مرضی کر لیں۔ ہماری حکومت میں تحریک انصاف نے استعفے دیے، مگر اس کے اراکین تنخواہیں لے رہے تھے۔ان کا کہنا تھا جی اقتدار اور دولت کی ہوس ان حکمرانوں کو لے ڈوبے گی۔ اپوزیشن نے حکومت کا کچھ نہیں بگاڑا، یہ حکمران خود اپنے دشمن ہیں۔ یہ حکومت کس کس چیز کی درستگی کرے گی۔ صرف ایک دن میں 143 ارب روپے کا سٹاک ایکسچینج میں نقصان ہوا۔خواجہ آصف نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان کی معیشت کو ڈبونے کے تمام لوازمات پورے ہیں۔ حکومت نے اس ملک کو چینی اور آٹا مافیا کی پناہ گاہ بنا دیا ہے۔ اس وقت بحران سے فائدہ اٹھانے والے حکومت میں ہیں، یا اس کے کفیل ہیں۔ ایف آئی اے نے کچھ ایسے لوگوں کے نام لئے ہیں جن کی وجہ سے سارا بحران پیدا ہوا۔

اپوزیشن

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) وفاقی وزیر حماد اظہر نے کہا ہے کہ پچھلی حکومت کا کیا دھرا ہم بھگت رہے ہیں۔ مہنگائی کی وجہ مشکل فیصلے ہیں۔ گندم اور چینی کے بحران پر انکوائری کی تفصیلات منظر عام پر لائیں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے قومی اسمبلی سے خطاب میں کیا۔ حماد اظہر کا کہنا تھا کہ گندم اور چینی کی قیمت میں کمی آنا شروع ہو گئی ہے۔ چینی کی قیمت ابھی تک اوپر ہے، اس پر بھی کام ہو رہا ہے۔وفاقی وزیر برائے اقتصادی امور کا کہنا تھا کہ چینی اور گندم کے بحران پر انکوائری ہوئی ہے۔ سندھ میں بھی جلد آٹے اور روٹی کی قیمتوں کو جلد نیچے لایا جائے گا۔ گزشتہ حکومت کے خسارے ہمیں پورے کرنے پڑ رہے ہیں، اسی لیے سخت فیصلے کرنے پڑے۔ان کا کہنا تھا کہ مہنگائی کا ہمیں سب سے زیادہ احساس ہے۔ کوئی مجبوری ہوتی ہے جس وجہ سے ایسے مشکل فیصلے کرنے پڑتے ہیں۔ کسی بھی سیاسی حکومت کے لئے مقبول فیصلہ نہیں ہوتا کہ وہ بجلی اور گیس کے بل بڑھائے۔وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید نے بلاول بھٹو کی تقریر کا ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ حادثاتی طور پر چیئرمین بننے والے ہمیں سیاست سکھا رہے ہیں۔ ہم وصیت یا پرچی پر نہیں آئے، حرام کی کمائی پر بھی بڑے نہیں ہوئے۔

حکومت

مزید : صفحہ اول