حجاب معاملہ، کرناٹک ہائیکورٹ کے عبوری فیصلے کیخلاف سپریم کورٹ میں فوری سماعت کی اپیل مسترد

    حجاب معاملہ، کرناٹک ہائیکورٹ کے عبوری فیصلے کیخلاف سپریم کورٹ میں فوری ...

  

        نئی دہلی،بنگلورو(این این آئی)بھارتی سپریم کورٹ نے باحجاب طالبات کے تعلیمی اداروں میں داخلے پر پابندی کے معاملے پر کرناٹک ہائی کورٹ کے عبوری فیصلے کیخلاف اپیل بھی فوری سماعت کیلئے مسترد کردی۔میڈیارپورٹس کے مطابق بھارتی سپریم کورٹ کا کہناتھا کہ کرناٹک ہائی کورٹ کی سماعت اور کرناٹک میں جو ہو رہا ہے اسے دیکھ رہے ہیں، وکلا کرناٹک حجاب معاملے کو قومی سطح کا معاملہ نہ بنائیں، مناسب وقت پر معاملے میں مداخلت کریں گے۔قبل ازیں کرناٹک ہائیکورٹ نے طالب علموں سے کہا کہ وہ حجاب اور اسکارف پر پابندی کے حوالے سے درخواستوں کا فیصلہ آنے تک کوئی بھی مذہبی لباس نہ پہنیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق کرناٹک ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ریتو راج اوستھی نے کہا کہ ہم ایک حکم جاری کریں گے لیکن جب تک یہ معاملہ حل نہیں ہو جاتا، کوئی بھی طالب علم مذہبی لباس پہننے پر اصرار نہ کرے۔درخواست گزاروں کی نمائندگی کرنے والے وکلا نے عبوری حکم پر اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ یہ ہمارے حقوق کی معطلی کے مترادف ہے لیکن عدالت نے کہا کہ یہ چند دنوں کا معاملہ ہے اور اس کے بعد سماعت ملتوی کردی۔عدالت نے ریاست کو ان اسکولوں اور کالجوں کو دوبارہ کھولنے کی بھی ہدایت کی جنہیں وزیر اعلی نے پابندی کے خلاف بڑھتے ہوئے احتجاج کے سبب تین دن کے لیے بند کر دیا تھا۔علاوہ ازیں کرناٹک کی باحجاب طالبہ کو بھارتی اخبارات نے صفحہ اول پر جگہ دی ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق کلکتہ سے جاری انگریزی اخبار نے طالبہ کی تصویر کیساتھ اس کے ساتھ پیش آنے والے رویے کو بھارت کی حالت زار قرار دیا۔اس حوالے سے اخبار نے لکھا کہ مودی صاحب، دیکھیں آپ کی طے کردہ مردانہ اقدار ایک طالبہ سے کیا سلوک کررہی ہیں۔

بھارتی سپریم کورٹ

مزید :

صفحہ اول -