سینیٹ قائمہ کمیٹی کی کچی شراب بھٹیوں بارے آئی جی سندھ سے رپورٹ طلب 

سینیٹ قائمہ کمیٹی کی کچی شراب بھٹیوں بارے آئی جی سندھ سے رپورٹ طلب 

  

اسلام آباد(آئی این پی) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے انسداد منشیات نے کچی شراب کی بھٹیوں کے خلاف کی گئی کارروائی سے متعلق آئی جی سندھ سے رپورٹ طلب کر لی  جبکہ360کلو ہیروئن پکڑنے پر اینٹی نارکوٹکس فورس کی تعریف کی اور سیکرٹری انسداد منشیات کوہیروئن پکڑنے والے اہلکاروں کو جلد انعام دینے کی ہدایت کی، سینیٹر سیف اللہ ابڑو نے کہا کہ جو لوگ کچی شراب بناتے ہونگے ان کے پاس اور بھی نشہ ہو گا، یہ ایک مافیا ہے جو نشے کا کام کرتا ہے۔جمعہ کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے انسداد منشیات کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر اعجاز چوہدری کی صدارت میں ہوا، اجلاس کے دوران سینیٹر سیف اللہ ابڑو نے کہا کہ مری کے واقعہ کے دو دن بعد سندھ میں کچی شراب پینے سے 25لوگ فوت ہو گئے، وہاں کچی شراب کی بھٹیاں ہیں، کوئی ایکشن نہیں ہوا، میں نے کہا تھا یہ معاملہ انسانی حقوق کو بھی بھیجیں، چھ لوگ بینائی کھو گئے، کافی لوگ ہسپتال میں بھی داخل ہوئے، کچھ بھی ایکشن نہیں ہوا، انہوں نے کہا کہ افسوس یہ ہے شیریں مزاری ساڑھے تین سال میں سندھ نہیں گئیں پھر بھی چھٹے نمبر پر ان کو انعام ملا ہے۔سیکرٹری نارکوٹکس کنٹرول نے کمیٹی کو بتایا کہ ابتدائی طور پر یہ لوکل پولیس کا کام ہے، لوکل ایشو ہے، 35 ایجنسیز پہلے موجود ہیں جن کا یہ کام ہے،لوکل پولیس کی سب سے بڑی ذمہ داری ہے، جس پر سینیٹر سیف اللہ ابڑو نے استفسار کیا کہ شراب آپ نہیں پکڑتے؟اے این ایف حکام نے کہا کہ چرس،ہیروئن کیساتھ شراب پکڑی جائے تو اس کو پھر ہم انویسٹی گیٹ کرتے ہیں۔

کچی شراب

مزید :

صفحہ آخر -