ملاوٹی دودھ‘ فوڈ اتھارٹی کا صوبہ بھر میں کریک ڈاؤن کا آغاز 

ملاوٹی دودھ‘ فوڈ اتھارٹی کا صوبہ بھر میں کریک ڈاؤن کا آغاز 

  

پشاور(سٹی رپورٹر)  خیبرپختونخوا فوڈ سیفٹی اتھارٹی نے صوبہ بھر میں ملاوٹ شدہ دودھ کے خلاف کریک ڈان کا آغاز کردیا، اور مختلف اضلاع میں ناکہ بندی کے دوران دودھ سپلائی کرنے والے کنٹینرز اور ڈیری شاپس کے معائنے پر 1500 لٹر سے زائد پانی ملا ناقص دودھ تلف کردیا گیا۔ پشاور میں موٹروے وے ٹول پلازہ کے قریب ناکہ بندی کے دوران ایک گاڑی سے 1000 کلو سے زائد مضر صحت پنیر برآمد کرکے تلف کردیا گیا۔ وزیر خوراک عاطف خان اور سیکرٹری محکمہ خوراک کیپٹن ریٹائرڈ مشتاق احمد کی ہدایت پر صوبے بھر میں ملاوٹ مافیا کے خلاف کاروائیوں کا سلسلہ تیز کردیا گیا ہے۔ فوڈ سیفٹی اتھارٹی کے مطابق پشاور میں موٹروے ٹول پلازہ کے قریب ایک گاڑی سے 240 لٹر سے زائد ملاوٹ شدہ دودھ بھی برآمد کیا گیا۔ اسی طرح ڈی آئی خان میں بھی دریا پل پر ناکہ بندی کے دوران دودھ سپلائی کرنے والے مختلف کنٹینرز اور گاڑیوں کا معائنہ کیا گیا۔کاروائی کے دوران مختلف گاڑیوں سے 500 لٹر سے زائد ملاوٹ شدہ دودھ برآمد کرکے تلف کردیا گیا۔ لائیو سٹاک ڈیپارٹمنٹ کے تعاون سے مضر صحت دودھ کی ترسیل روکنے کے لئے سوات کے داخلی راستوں پر  بھی ناکہ بندی کی گئی، اور سینکڑوں لیٹر مضر صحت دودھ ضائع کردیا گیا۔  ضلع کے داخلی راستوں پر جدید موبائیل لیبارٹری کے ذریعے باقاعدگی سے ناکہ بندیاں شروع کردی گئی ہے جہاں جدید موبائل لیب کے ذریعے خوراکی اشیا کو ٹیسٹنگ کے مرحلے سے گزارا جارہا ہے۔ ملاوٹ پائے جانے پر کئی سو لیٹر دودھ کو موقع پر ضائع کیا گیا جبکہ بھاری جرمانے بھی عائد کئے گئے۔ مالکان کے خلاف فوڈسیفٹی ایکٹ کے تحت قانونی کاروائی کی گئی۔  مانسہرہ اور بنوں میں بھی دودھ سپلائی کرنے والے ٹینکرز اور دیگر گاڑیوں کا معائنہ کیا گیا، انسپکشن کے دوران دودھ میں پانی کی ملاوٹ ثابت ہونے پر مالکان پر بھاری جرمانے عائد کئے گئے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -