عام انتخابات کےد وران ریٹرننگ افسران نے قانونی تقاضوں کو پورا نہیں کیا، فافن کی رپورٹ

عام انتخابات کےد وران ریٹرننگ افسران نے قانونی تقاضوں کو پورا نہیں کیا، فافن ...
عام انتخابات کےد وران ریٹرننگ افسران نے قانونی تقاضوں کو پورا نہیں کیا، فافن کی رپورٹ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) فری اینڈ فیئر الیکشن نیٹ ورک (فافن) نے الیکشن 2024 کے حوالے سے جائزہ رپورٹ جاری کردی ہے جس میں کہا گیا کہ انتخابات کے دوران ریٹرننگ افسران نے قانونی تقاضوں کو پورا نہیں کیا۔ 

فافن کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ الیکشن ایکٹ کا تقاضا ہے کہ ریٹرننگ آفیسر فارم 47 انتخابی امیدواروں، انکے ایجنٹس ، مجاز مبصرین کی موجودگی میں بناتا ہے، مشاہدے میں شامل 260 انتخابی حلقوں میں سے 135 کے آر اوز نے تمام قانونی تقاضے پورے نہیں کیے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ریٹرننگ آفیسرز کے اس عمل سے انتخابی شفافیت کیلئے الیکشن کمیشن کی کاوشیں متاثر ہوئیں، آر اوز نے 135 قومی اسمبلی حلقوں میں فافن مبصرین کو نتائج کی تیاری کا مشاہدہ نہیں کرنے دیا۔فافن نے کہا مبصرین کو مشاہدے سے روکے گئے انتخابی حلقوں میں سے 46 میں پی ٹی آئی حمایت یافتہ امیدوار، 43 میں ن لیگ اور 28 میں پیپلز پارٹی کے امیدوار کامیاب ہوئے۔فافن نے کہا کہ ریٹرننگ آفیسرز نے 65 حلقوں کے نتائج تیاری میں انتخابی امیدواروں، ان کے ایجنٹس کو جائزہ سے روکا، ایسے حلقوں میں سے مسلم لیگ ن کے 25، پی ٹی آئی حمایت یافتہ 24، پیپلز پارٹی کے 5 امیدوار جیتے۔

 فافن نے کہا کہ رات 2 بجے تک نتائج تیاری کی قانونی مہلت پر صرف 4 انتخابی حلقوں میں عمل ہوا، زیر مشاہدہ  80 حلقوں میں سے 42 میں تھیلے انتخابی امیدوار یا ایجنٹس کے بغیر کھولے گئے۔فافن کا کہنا ہے کہ آر اوز نے 53 قومی حلقوں میں فارم 45 کی گنتی غلطیوں کی قانونی نشاندہی کرکے پریزائڈنگ آفیسرز سے درستگی کرائی۔