پاکستان دو عشروں سے دہشتگردوں کے نشانے پر ہے،علامہ ناصرعباس

پاکستان دو عشروں سے دہشتگردوں کے نشانے پر ہے،علامہ ناصرعباس

  

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصرعباس جعفری نے کہا کہ کسی بھی ملک سے معاملات طے کرتے وقت ہمیں عالمی تعلقات اور قومی وقار کو مقدم رکھنا انتہائی ضروری ہے۔پاکستان گزشتہ دو عشروں سے دہشت گردوں کے عین نشانے پر ہے۔دہشت گردی کے عفریت نے ہمارے امن و امان کو تباہ کرکے ملکی سالمیت و خودمختاری کو چیلنج کر رکھا ہے۔ایسی صورتحال میں ملک کی عسکری و سیاسی قوتوں کو تمام تر توجہ وطن عزیز کے داخلی معاملات پر مرکوز رکھنا ہر گی۔اسلامی برادر ممالک سے عہد و پیمان ذاتی تعلقات کی بنا پر نہیں بلکہ زمینی حقائق کو مدنظر رکھ کر کیے جائیں۔انہوں نے کہا کہ حرمین شریفین کی حرمت مسلمہ اوراس کا تحفظ و دفاع ہر مسلمان پر واجب ہے۔ مقامات مقدسہ کونقصان پہنچانے کا خیال بھی گناہ عظیم ہے۔سعودی حکومت اپنے اقتدار کی بقا کی جنگ کو حرمین شریفین کے تقدس کے ساتھ جوڑ رہی ہے۔سعودی عرب کو کسی بھی مسلم ملک سے قطعا خطرہ نہیں بلکہ یہ خطرے کا واویلا کر کے عالم اسلام کو انتشار و گروہ بندی کا شکار کرنا چاہتے ہے۔سعودی عرب مسلمانوں کے مذہبی جذبات کے ساتھ خطرناک کھیل کھیلنے میں مگن ہے۔پاکستان عالم اسلام کا ایک مضبوط اور قابل اعتماد ملک ہے امت مسلمہ کے استحکام کے لیے پاکستان کا کردار موثر اور مثالی ہونا چاہیے۔ہمیں عالمی سازشوں کا حصہ بننے کی بجائے ان کے تدارک کے لیے بابصیرت اور قومی وقار کے عین مطابق فیصلے کرنا ہوں گے۔

مزید :

کراچی صفحہ آخر -