وزیر اعظم کو اراکین اسمبلی کے سوالات کے جوابات دینے کا پابند کرنے کی تحریک کثرت رائے سے مسترد

وزیر اعظم کو اراکین اسمبلی کے سوالات کے جوابات دینے کا پابند کرنے کی تحریک ...
وزیر اعظم کو اراکین اسمبلی کے سوالات کے جوابات دینے کا پابند کرنے کی تحریک کثرت رائے سے مسترد

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)پی پی پی نے قومی اسمبلی کے رولزمیں تبدیلی کیلئے تحریک ایوان میں پیش کردی ہے جسے 2 بار گنتی کے بعد مسترد کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق تحریک پیپلزپارٹی کی رکن قومی اسمبلی نفیسہ شاہ نے پیش کی۔ تحریک میں کہا گیا تھا کہ اجلاس میں ہربدھ کو وزیراعظم کوسوالات کے جوابات دینے کاپابندبنایاجائے، وزیراعظم آدھے گھنٹے کیلئے وقفہ سوالات میں ارکان کے سوالات کے جوابات دینگے، وزیراعظم سے سوالات کیلئے رولزمیں رول79کے بعد79 اے کوشامل کیا جائے۔

وزیرمملکت پارلیمانی امورنے قومی اسمبلی کے رولز میں تبدیلی کی تحریک کی مخالفت کردی جس پر سپیکر نے ووٹنگ کا فیصلہ کیا۔ گنتی کے دوران تحریک کے حق میں 53 جبکہ مخالفت میں 70 ووٹ آئے ۔ اپوزیشن ارکان کی جانب سے دوبارہ گنتی کا مطالبہ کیا گیا جس پر سپیکر نے دوبارہ گنتی کا حکم دیا تو اپوزیشن کو پھر سے شکست کا سامنا کرنا پڑا اور تحریک مسترد کردی گئی ۔

وزیرمملکت پارلیمانی امور کا کہنا تھا کہ وزیراعظم ملک کے چیف ایگزیکٹوبھی ہیں،ملکی حالات آپ کے سامنے ہیں،ہاؤ س کوچلاناکابینہ کی مشترکہ ذمے داری ہے۔ کون ساایسا سوال یاتوجہ دلاو نوٹس ہے جس کا جواب ہم نے نہیں دیا، وزیر اعظم جب ضروری سمجھتے ہیں ایوان میں آکرپالیسی بیان دیتے ہیں۔

تحریک مسترد ہونے کے بعد اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ یوسف رضاگیلانی بدھ کوسوالات کے جوابات دیتے تھے، ہم سے یہ غلطی ہوئی کہ اس وقت اسے قانونی شکل نہیں دی، درخواست ہے تحریک کی مخالفت نہ کریں ، کمیٹی کو بھیج دیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم سب سمجھتے ہیں،پاک چین اقتصادی راہداری کوبھی سمجھتے ہیں۔ وزیراعظم کاویژن زیادہ ہے،وہ پارلیمنٹ میں بھی بولیں لیکن وہ زیادہ وقت بیرون ملک گزارتے ہیں۔ وزیر اعظم پارلیمنٹ میں آنا چاہتے ہیں مگر انہیں روکا جارہا ہے ۔ دنیاکواچھا پیغام جاتا کہ وزیراعظم کو پارلیمانی کارروائی کاپتاہے،حکومت کو اچھا موقع ملا تھا کہ بل کی حمایت کرکے پارلیمنٹ کومضبوط کرتی۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -