پنجاب میں بچوں کو اغواء کے بعد قتل کے واقعات میں اضافہ


لاہور(کرائم رپورٹر) صوبہ پنجاب میں معصوم بچوں کو اغواء کے بعد قتل کرنے کے واقعات میں تشویش ناک حد تک اضافہ ہو گیا ہے۔ لاہور میں ڈیڑھ سال قبل بچوں کے اغواء کی وارداتوں کو حکومت نے میڈیا کی بے حسی قرار دیا تھا۔ پنجاب میں گزشتہ سال 2690 بداخلاقی کے کیس رپورٹ ہوئے جبکہ 2016ء میں جنسی بداخلاقی میں 10 فیصد اضافہ ہوا اور پنجاب میں مجموعی طور پر 2570 بداخلاقی کے واقعات سامنے آئے۔ 2017ء میں 176 خواتین کو اجتماعی بداخلاقی کا نشانہ بنایا گیا جبکہ صوبائی دارالحکومت میں 2017ء کے دوران 25 کمسن بچوں کو بداخلاقی کا نشانہ بنایا گیا۔ اب زینب کیس میں بھی جے آئی ٹی تشکیل دی گئی ہے۔ ملزم کا خاکہ بھی جاری کیا گیا ہے مگر پولیس کی تمام تر کاوشیں بے سود دکھائی دیتی ہیں۔ قصور وہ شہر ہے جہاں آئے روز بداخلاقی کے واقعات سامنے آ رہے ہیں۔ کمیٹیاں بننے کے باوجود قصور کے ملزمان آج تک گرفتار نہیں ہو سکے، جس کی وجہ سے آج بھی وہ درندے کھلے عام بداخلاقی کر رہے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...