اللہ اور قانون کو سامنے رکھ کر ججز مقدمات سنیں اور فیصلے کریں:چیف جسٹس

  اللہ اور قانون کو سامنے رکھ کر ججز مقدمات سنیں اور فیصلے کریں:چیف جسٹس

  



حیدر آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) چیف جسٹس پاکستان جسٹس گلزار احمد نے کہاہے کہ ججز کی ڈیوٹی ہے کہ اللہ اور قانون کو سامنے رکھ کر عوام کے کیسز سنیں اور فیصلے کریں، ہر کوئی عدالت میں انصاف کیلئے آتا ہے، قانون کہتا ہے لوگ انصاف لے کر خوش ہوکر عدالتوں سے جائیں اورعدالتوں کا کام ہے کہ عوام کو سہولیات کیلئے ان کا ساتھ دیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے حیدر آباد میں ڈسٹرکٹ بار کی سالانہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔چیف جسٹس نے کہا کہ انصاف فراہم کرنا عدالت کا فریضہ ہے، کوشش ہے کہ ہر شخص کو آئین کے مطابق انصاف فراہم کیا جا سکے، آئین نے پاکستانی شہریوں کے حقوق کا ایک طریقہ کار وضع کیا ہوا ہے۔چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ قانون میں ہر شہری کی تعلیم صحت، سمیت دیگر ضروریات کا تحفظ ہے، لوگ قانون کا فائدہ نہیں اٹھا پا رہے ہیں، جس کا معاشرے پر اثر ہو رہا ہے، ہمارے ملک میں پوٹینشل بہت ہے۔جسٹس گلزار احمدنے کہاکہ یقین دلاتا ہوں کہ عدلیہ لوگوں کو انصاف فراہم کرنے کیلئے خدمات انجام دے رہی ہے، بینچ اور بار مل کر شہریوں کی زندگیوں کو بہتر بنانے کے لئے کام کر رہی ہیں۔

چیف جسٹس

مزید : صفحہ اول