این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبوں کو جائز حق سے محروم رکھا گیا ہے:پروفیسر ابراہیم

این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبوں کو جائز حق سے محروم رکھا گیا ہے:پروفیسر ...

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر) نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان وسابق سینیٹرپروفیسر ابراہیم نے کہا ہے کہ وفاق کی جانب سے این ایف سی ایوارڈ کی تقسیم میں نا انصافی سے چھوٹے صوبوں میں احساس محرومی بڑھ رہاہے۔ ن لیگ سے لیکر انصاف کے دعویداروں نے بھی این ایف سی ایوارڈ کے تحت صوبوں کو اپنے جائز حق سے محروم رکھا گیا ہے۔ وفاقی ملازمت ٹال مٹول اور تاخیری حربوں کے ذریعہ صوبوں کو بے معنی معاملات میں الجھا کر این ایف سی میں تاخیر کر رہی ہے۔ جماعت اسلامی سندھ کے میڈیا سیل کے دورے کے موقع پر بات چیت کرتے ہوئے  کے پی کے سے این ایف سی ایوارڈ کے سابق رکن پروفیسر ابراہیم نے مزید کہا کہ عدل و انصاف کے بغیر کوئی معاشرہ و ملک ترقی نہیں کر سکتا۔ اپنے ذاتی مفادات کیلئے آئین و قانون کی بات کرنے والا حکمراں ٹولہ صوبوں کے وسائل اور حقوق کے معاملے پر آئین و قانون کی شدید خلاف ورزیاں کر رہا ہے۔ قومی فنانس کمیشن ایوارڈ کے بارے میں چاروں صوبے وفاقی حکومت سے این ایف سی ایوارڈ فوری طو دینے کا مطالبہ مطالبہ کرچکے ہیں اور مزید تاخیر نہ کی جائے‘ آئین کے آرٹیکل160کی وضاحت کیلئے سپریم کورٹ سے رجوع کرنے کا عندیہ بھی دیا گیا۔فاٹا کو کے پی کے میں ضم کرنے کے باوجود ان کو اپنے جائز حق سے محروم رکھا گیا ہے وہی شکایات چھوٹے صوبوں سندھ و بلوچستان کو ہیں۔ ہم نے بطور ممبر این ایف سی ایوارڈ (کے پی کے) بارہا اجلاس میں عدل و انصاف کے فارمولے اور چھوٹے صوبوں کے جائز حقوق کی بات کی ہے مگر اقتدار و طاقت کے نشے میں مگن حکمران چھوٹے صوبوں کی بات سننے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ جس کی وجہ سے وفاق اور خاص طور پر چھوٹے صوبوں کے درمیان فاصلے بڑھ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ قرآن و سنت کے نفاذ میں ہی عوام کے تمام مسائل کا حل اور صوبوں کو اپنے حقوق مل سکتے ہیں۔ جماعت اسلامی نے ہمیشہ عدل و انصاف کی بات کی اور ہر فورم پر چھوٹے صوبوں کے جائز حقوق کیلئے آواز اٹھایہ ہے۔ جماعت اسلامی کے رہنماء نے زور دیا کہ وفاق بڑے پن اور آئین و دستور کے مطابق این ایف سی ایوارڈ کے مطابق چھوٹے صوبوں کو اپنے حقوق دینے کیلئے اقدامات کرے تاکہ وفاق اور تمام صوبوں کے درمیان فاصلے بڑھنے کی بجائے اتحاد و یکجہتی اور بھائی چارہ کے ماحول کو فروغ مل سکے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...