مڈ وائف کی کارستانی سے خاتون بے ہوش‘ بچہ جاں بحق‘ ورثاء کا احتجاج 

مڈ وائف کی کارستانی سے خاتون بے ہوش‘ بچہ جاں بحق‘ ورثاء کا احتجاج 

  

ٹھینگی(نامہ نگار) ٹھینگی کے نواحی گاں 50/ڈبلیوبی کے بنیادی مرکز صحت میں تعینات مڈوائف نے حاملہ خاتون کو اپنے پرائیویٹ کلینک پر لے جاکر پیٹ میں موجود بچے کی جان لے لی‘ بغیر نشہ آور انجیکشن لگائے آپریشن بھی کرڈالا‘ تفصیل کے مطابق ٹھینگی کے نواحی گاں چک نمبر 60/ڈبلیوبی کے رہائشی محنت کش حافظ قرآن محمد خلیل کی بیوی نے اپنے خاوند کے ہمراہ احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ میں ڈلیوری کے لئے قریبی بنیادی مرکز صحت چک نمبر 50/ڈبلیوبی میں گئی(بقیہ نمبر54صفحہ10پر)

 جہاں ڈیوٹی پر موجود مڈوائف آسیہ ریاض نے ایک نظر دیکھا اور فون میں مصروف ہوگئی تین گھنٹے ہسپتال میں پڑی تڑپتی رہی تین گھنٹے گزرنے کے بعد آسیہ ریاض نے کہا کہ آپ میرے پرائیویٹ ہسپتال عبداللہ کلینک اینڈ میٹرنٹی ہوم ٹھینگی آجا وہاں آپکا ڈلیوری کیس آسانی سے فوری ہوجاے گا جس پر ہم اس کے ہسپتال ٹھینگی چلے گئے جہاں اس نے مجھے نیچے فرش پر لٹا دیا اور کارروائی کے دوران میرا بچہ پیٹ میں تڑپ تڑپ کر مرگیا تو بغیر نشہ آور انجیکشن لگاے میرا آپریش کردیا میں اللہ رسول کے واسطے دیتی رہی لیکن ظالم آسیہ ریاض کو ذرا رحم نہ آیا میں درد برداشت نہ ہونے پر بے ہوش ہوگئی تو میرے پیٹ سے بچہ نکالا جو مڈوائف آسیہ ریاض کی بے رحمی غفلت ناتجربہ کاری اور لاپرواہی کی وجہ سے مرگیا مظلومہ شمیم بی بی خاوند حافظ محمد خلیل اور دیگر نے وزیرِاعلی پنجاب سردار عثمان بزدار سیکرٹری صحت پنجاب سی ای او صحت وہاڑی اور ڈپٹی کمشنر وہاڑی سے فوری کاروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

بچہ جاں بحق

مزید :

ملتان صفحہ آخر -